Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

بلوچستان میں جانوروں کی ہڈیوں کے ذریعے مستقبل کی پیشن گوئی

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

مستقبل کے بارے میں جاننے کی خواہش کسے نہیں ہوتی اس مقصد کے لئے انسان زمانۂ قدیم سے علم جوتش اور دوسرے علوم پر انحصارکرتا رہا ہے۔ اسی طرح کچھ تہذیبوں میں ایسے عقائد و روایات بھی موجود تھے، جن سے انسان اپنے ارد گرد بکھری اشیاء کے ذریعے مستقبل کا حال جاننے کی کوشش کرتا ہے۔ ایسی اشیاء سے مستقبل میں جھانکنے کا علم ان اقوام کے بزرگ افراد سے علم سینہ بہ سینہ اگلی نسلوں میں منتقل ہوتا رہا۔

‘اوسٹیومینسی‘یا علم ِ استخواں دنیا کے مختلف خطوں میں صدیوں سے استعمال کیا جانے والا مستقبل بینی کا طریقۂ کار ہے جس میں جانوروں کی ہڈیوں کے ذریعے سعد و نحس اوقات، شادی بیاہ، اولاد، بارشوں یا خشک سالی، وبائی امراض اور قدرتی آفات وغیرہ کے متعلق پیشن گوئی کی جاتی ہے۔ یہ طریقۂ کار مشرقی اور شمال مشرقی ایشیا خصوصاً چین میں خاصہ مقبول رہا ہے۔ ان علاقوں کے جغرافیائی محل ِ وقوع کے مطابق مختلف جانوروں جیسے بھیڑ، بکری، گائے، ہرن، رینڈیر اور خنزیر وغیرہ کے کندھے کی ہڈیاں استعمال کی جاتی تھیں۔

پیشن گوئی اور جانور کے شانے کی ہڈی

مستقبل کے متعلق پیشن گوئی کے لیے ایسے معاشرے کے ‘سیانے‘ کسی ایسے جانور کی ہڈیوں کا انتخاب کرتے ہیں جن کا وہاں کے سماجی و معاشی نظام پر گہرا اثر ہو۔ ان جا نوروں کی ہڈیوں کو براہِ راست آگ میں جلا کر ، ابال کر یا کسی اور عمل سے گزار کر ان سے مستقبل کا حال جاننے کی کوشش کی جاتی ہے۔ بلوچستان میں ڈیرہ بگٹی، بارکھان ، روجھان اور ملحقہ علاقوں کے مختلف قبائل میں جو طریقہ پیشن گوئی کے لیے استعمال کیا جاتا ہے اس میں بھیڑ یا بکرے/ بکری کے کندھے کی ہڈی “سکیپیولا” پر سے بہت احتیاط کے ساتھ گوشت اتارا جاتا ہے اور پھر اس پر ابھرنے والے افقی، عمودی، دائروی یا رنگ دار نشانات کو ڈی کوڈ کر کے پیشن گوئی کی جاتی ہے۔ اس عمل کو مقامی زبان میں “باردست” کہا جاتا ہے۔

شمال مشرقی ایشیائی ممالک میں اس مقصد کے لیے جو طریقۂ کار استعمال کیا جاتا ہے اسے “پائیرو اوسٹیومینسی” کہا جاتا ہے۔ اس میں ہرن، بھیڑ یا خنزیر کے شانے کی ہڈی کو آگ میں جلایا جاتا ہے اور بعد میں ہڈی پر چٹخنے کے نشانات سے مستقبل کے حالات کے بارے میں مدد لی جاتی ہے۔ ہڈی کے مختلف حصوں کو مختلف معاملات سے منسوب کیا جاتا ہے۔ جیسے ہڈی کے اوپر کا حصہ سیاست و حکومت، درمیانی حصہ معاشی حالات اور بارش یا موسم جبکہ نچلا حصہ خاندان و ذاتی زندگی کے مخصوص ہوتا ہے۔

تاریخی ماخذ

بلوچستان کے دیہی اور قبائلی علاقے جہاں ابھی تک تعلیم کا فقدان اور سرداری و نوابی نظام کا راج ہے وہاں باردست کو بہت زیادہ اہمیت حاصل ہے اور اسے مقامی اخبار سمجھا جاتا ہے جو مستقبل میں رونما ہونے والے واقعات کی خبر دیتا ہے۔ یہ جاننے کے لئے مقامی افراد سے رابطہ کیا کہ اس طریقۂ کار کا اصل ماخذ کیا ہے تو ان کا کہنا تھا کہ یہ علم اپنے بزرگوں سے منتقل ہوا اور بزرگوں کو آبا ؤ اجداد کے ذریعے ملا۔ یہ لوگ کوئی معتبر و مستند تاریخی حوالہ دینے سے قاصر ہیں۔ روجھان سے تعلق رکھنے والے عابد بلوچ کے مطابق انھوں نے اس طرح کی ہڈی اپنے بزرگوں اور خانہ بدوشوں کے پاس دیکھی ہے مگر وہ اسے فال سے زیادہ اہمیت نہیں دیتے۔ ایک دفعہ انھوں نے ایک خانہ بدوش سے یہ ہڈی لے کر اس کا معائنہ کرنے کی کوشش کی تو اس نے یہ کہہ کر انکار کر دیا کہ یہ پیشن گوئی پر اثر انداز ہوتا ہے۔ عابد بلوچ کو انھیں یقین ہے کہ فی زمانہ جو لوگ اس علم کا دعویٰ کرتے ہیں وہ دھوکا دیتے ہیں۔

قدیمی دور میں تقریبا ایک ہزار قبل چین کے شینگ شاہی دور میں پائیرو اوسٹیومینسی کا رواج رہا تھا۔ ایسے ہی شمالی امریکہ کے مختلف قبائل میں بھی اوسٹیومینسی کا اعتقاد پایا جاتا رہا۔ مگر بلوچستان یہ روایت کس دور میں اور کیسے پہنچی اس حوالے سے کوئی تحقیق نہیں ہوئی۔

Pakistan Belutschistan Orakel Knochen

مقامی افراد اور ماہرین کی آرا

ڈیرہ بگٹی اور ڈسٹرکٹ بارکھان سے ملحقہ علاقوں میں مختلف قبائل کے کم پڑھے لکھے افراد آج کے ڈیجیٹل دور میں بھی باردست پر بھرپور یقین رکھتے ہیں۔ یہاں تک کہ اس طریقۂ کار کو قبیلے کا سردار منتخب کرنے کے لئے بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ نہر کوٹ سے تعلق رکھنے والے اویس کوئٹہ کے ایک لوکل کالج میں زیر تعلیم ہیں ان کے مطابق وہ باردست پر بلکل یقین نہیں رکھتے کیونکہ ایکسپرٹ کے پاس اس کے مستند ہونے کی واحد دلیل یہ ہے کہ اگر ایک بکرے یا بھیڑ کے دائیں اور بائیں کندھے کی ہڈی پر پائے جانے والے نشانات اور علامات ایک دوسرے سے بلکل مختلف ہوں تو پیشن گوئی 90 فیصد درست ہوگی۔ جمیل بگٹی بھی اسی علاقے سے ہیں ان کا کہنا تھا کہ یہاں زیادہ تر مقامی افراد بیٹا یا بیٹی کی پیدائش کے لئے باردست کی مدد لیتے ہیں جو آج کے دور میں انتہائی مضحکہ خیز لگتا ہے۔

لاہور کی فارمین کرسچیئن کالج یونیورسٹی کے سکول آف لائف سائنسز سے وابسطہ سینئر استاد ڈاکٹر محمد مصطفیٰ کے مطابق انھیں پہلی دفعہ باردست کے بارے میں نواب اکبر بگٹی مرحوم کے ایک ٹی وی انٹرویو کے ذریعے معلوم ہوا تب انھوں نے اس کے بارے میں مزید جاننے کی کوشش کی لیکن انھیں انٹرنیٹ یا دیگر ذرائع سے اس پر کوئی مستند تحریر نہیں مل سکی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.