0

وزیراعظم عمران خان کی سابقہ اہلیہ جمائما گولڈ استھ نے حالیہ ٹویٹ میں ہیری اور میگھن کی جانب سے شاہی زندگی ٹھکرانے کے فیصلے سے متعلق ٹویٹ میں واضح کیا کہ عمران خان اور ان کے راستے جدا ہونے میں کس بات کا عمل دخل تھا۔

چند روز قبل برطانوی شہزادے ہیری اور ان کی اہلیہ سابق امریکی اداکارہ میگھن مارکل کی جانب سے شاہی عیش وآرام چھوڑ کر آزادانہ و خود مختار زندگی بسر کرنے کا فیصلہ سامنے آیا تھا۔

اس فیصلے پر تصرہ کرتے ہوئے جمائما نے اپنے متعلق کچھ ایسا کہا جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ان کے دل میں عمران خان سے شادی کے بعد درپیش رویوں کی خلش اب تک ہے۔اور وہ نسل پرستی کو اس کی ایک اہم وجہ سمجھتی ہیں۔

شاہی خاندان کے چھوٹے شہزادے اور ان کی اہلیہ میگھن سے متعلق جمائما نے اپنی ٹویٹ میں لکھا ’’ جس طرح میگھن اور ہیری نے معاملات کو سنبھالا، ضروری نہیں کہ میں اس سے اتفاق کرتی ہوں لیکن مجھے پتہ ہے کہ شہزادی ڈیانا نے کن حالات کا سامنا کیا تھا۔۔۔ یہ ایسا ہے کہ کسی دوسرے ملک کے قومی ہیرو سے شادی کرنا اورپھر اپنی قومیت کے باعث میڈیا کا نشانہ بن جانا۔

جمائما نے ٹویٹ میں اپنے یہودی ہونے کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا عمران خان اور اپنی شادی وطلاق کے تناظر میں لکھا کہ میرے معاملے میں ایسا ہی ہوا۔

جمائما طلاق کے بعد اپنے وطن واپس جا چکی ہیں لیکن پاکستان سے ان کا تعلق ختم نہیں ہوا، اور وہ سوشل میڈیا کے ذریعے کسی نہ کسی طورمختلف معاملات سے جڑی رہتی ہیں اور یہاں کےعوام بھی ان سے رابطے میں رہنےکا ہنرخوب جانتے ہیں،اسی لیے اس ٹویٹس پر بھی پاکستان سے خوب ردعمل دیکھنے میں آیا۔

جواب دینے والوں میں اداکارہ مہوش حیات پیش پیش تھیں جنہوں نے لکھا کہ اس خبر نے ان کا دل توڑ دیا، کاش دنیا میں برداشت کرنے کا ہنر ہوتا۔

بیشتر ٹویٹس میں جمائما کی اس بات سے مکمل اتفاق کیا گیا۔

سال 1995 میں شادی کے بندھن میں بندھنے والے عمران خان اورجمائما گولڈ اسمتھ کی راہیں 2004 میں جدا ہو گئی تھیں لیکن شادی کے بعد حائقہ کا اسلامی نام پانے والی جمائما نے طلاق کے بعد بھی اپنے نام کے ساتھ لفظ ’’خان‘‘ جوڑے رکھا۔ شاید دلی وابستگی کے باعث ہی وہ ہر مشکل وقت میں عمران خان کا ساتھ دیتی آئی ہیں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.