Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

کورونا سے عالمی معیشتیں تنزلی کا شکار، 40 کروڑ افراد ملازمتوں سے ہاتھ دھو بیٹھے

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

کورونا وبا سے عالمی معیشتیں تنزلی کا شکارہونے لگیں، زندگی کا ہر شعبہ متاثر ہونے سے 40 کروڑ افراد ملازمتوں سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ بحالی میں کئی سال لگ سکتے ہیں۔

کورونا عالمی معیشتوں کے لیے بھی وبال بن گیا، کساد بازاری کا تاریخی چڑھاو آنے سے فیکٹریوں، کارخانوں کو تالے لگ گئے۔ آبادی کا تیسرا حصہ لاک ڈائون کا شکار ہے جس سے 40 کروڑ ملازمتیں ختم ہو گئیں جبکہ 37 سال بعد عالمی اسٹاک مارکیٹس مندی کا شکار ہو کر 220 ٹریلین ڈالر نقصان اٹھا چکیں۔ امداد اونٹ کے منہ میں زیرہ کے برابر ہے، ادویات ناپید ہو گئیں جس سے خوف اور افراتفری کا راج ہے۔

کورونا وبا کے باعث عالمی سطح پر معیشتوں پر اثرات کے حوالے سے یورپی سنٹرل بینک کے صدر کرسٹین لاگارڈے کا کہنا تھا کہ کورونا وبا کے باعث یورپی ممالک کی معیشت 12 فیصد سکڑی اور ڈیڑھ کروڑ افراد بے روزگار ہوئے جبکہ بیورو آف اکنامک کے تجزیہ کے مطا بق امریکہ میں پیداواری شرح48 سے سکڑ کر 32 اعشاریہ نو پر آگئی، لوگوں کی قوت خرید میں دس فیصد کم ہوئی، نئی گاڑیوں کی فروخت میں 40 فیصد کمی ہوئی۔

امریکن بگ تھری نے امریکہ میں اپنے تمام کارخانے بند کردیئے، برطانیہ میں معیشت 20 اعشاریہ 4 فیصد، آسٹریلیا میں 30 سال کے بعد معیشت 7 فیصد کم ہوئی جبکہ جی ٹونٹی ممالک کی معیشت 3 اعشاریہ چار فیصد سالانہ سکڑ رہی ہیں، جرمنی آٹو موٹیو انڈسٹری بھی بحران کا شکار ہوئی، بوئنگ اور ائربس کی کچھ کمیپنوں نے بھی پیداوار بند کردی۔
جنگ عظیم کے بعد جاپان کی جی ڈی پی پہلی بار 27اعشاریہ 8 فیصد سکڑی ، جنوبی کوریا کو سترہ سال میں پہلی بار کساد بازاری کا سامنا کرنا پڑا۔لاطینی امریکہ کے ممالک میں معاشی پیداواری شرح میں 9 اعشاریہ چار فیصد کمی ہوئی، اسٹاک، بانڈ، سونا اور خام تیل جیسی عالمی فنانشل مارکیٹس پر بھی وبا کا بہت ہی گہرا اور وسیع اثر پڑا۔

روس، سعودی عرب کے درمیان تیل کی قیمتوں پر تنازع کے باعث خام تیل کی قیمتیں اور اسٹاک مارکیٹس مارچ میں کریش کرگئیں۔ آئی ایل او کے مطابق اپریل سے جون تک دنیا بھر میں چالیس کروڑ فل ٹائم ملازمتیں ختم ہوئی، اس سال کے پہلے نو ماہ میں عالمی سطح پر ورکرز کی آمدن میں دس فیصد کمی ہوئی ہے۔

دنیا بھر کے شاپنگ سینٹرز نے کاروباری اوقات کم کیے، شاپنگ مال عارضی طور پر بند ہوئے۔ آن لائن شاپنگ رحجان میں دگنا اضافہ ہوا۔ جہاز رانی اور سیاحت کے شعبہ کو بھی نوے فیصد تک خمیازہ بھگتنا پڑا، اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ معیشتوں کی بحالی میں کئی ماہ یا پھر کئی سال لگ سکتے ہیں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.