Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

سیاسی جماعتوں کے اتحاد سے بھی متناسب نمائندگی پر فرق نہیں پڑتا

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

شہزاد ملک

پاکستان کے ایوان بالا یعنی سینیٹ کے آئندہ ماہ ہونے والے انتخابات اوپن رائے شماری سے کروانے سے متعلق صدارتی ریفرنس کی سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران سینیٹ کے سابق چیئرمین سینیٹر رضا ربانی نے جمعے کے روز دلائل دیتے ہوئے کہا کہ اس صدارتی ریفرنس میں صدر مملکت نے سپریم کورٹ سے آئین کے آرٹیکل 186 کے تحت رائے مانگی ہے، جبکہ حکومت کی طرف سے یہ تاثر دینے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ سپریم کورٹ یہ معاملہ آئین کے آرٹیکل 184 کی شق تین کے تحت سن رہی ہے جو کہ از خود نوٹس یعنی سو موٹو سے متعلق ہے۔پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما رضا ربانی نے کہا کہ صدر نے تو اپنے ریفرنس میں صرف یہ پوچھا ہے کہ سینیٹ کے انتخابات میں خفیہ ووٹنگ کا اطلاق ہوتا ہے یا نہیں۔انھوں نے کہا کہ ’میں اپنے دلائل کا آغاز اس پانچ رکنی بینچ میں شامل جسٹس ’اعجاز الحسن‘ کے ان ریمارکس سے کروں گا جس میں ا±نھوں نے کہا تھا کہ اگر سیاسی جماعتوں کو ان کی سیٹوں کے حساب سے نمائندگی نہ ملی تو سسٹم رک جائے گا۔‘تاہم سینیٹر رضا ربانی کی طرف سے غلط نام لینا شاید مذکورہ جج کو ناگوار گزرا اور ا±نھوں نے رضا ربانی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ‘میرا نام اعجاز الحسن نہیں بلکہ اعجاز الااحسن ہے۔‘اس کے بعد انھوں نے انگریزی کے وہ حروف بھی بتائے جو ان کے نام میں استعمال ہوتے ہیں۔سینیٹ کے سابق چیئرمین نے اس پر اپنی غلطی کی تصحیح کی۔رضا ربانی نے کہا کہ عام طور پر رکن پارلیمان کو سنجیدہ وکیل نہیں سمجھا جاتا جس پر چیف جسٹس گلزار احمد نے انھیں مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ’وہ سنہ 1994 سے سینیٹ کے رکن چلے آ رہے ہیں وہ ایک سینیٹر اور سنجیدہ وکیل بھی ہیں۔‘
رضا ربانی اپنے دلائل میں کہا کہ سینیٹ کے قیام کا مقصد تمام صوبوں کی یکساں نمائندگی ہے۔ ا±نھوں نے اپنے دلائل میں کہا کہ جو خود کو الگ سمجھتے تھے انھیں نمائندگی دینے کے لیے سینیٹ قائم ہوئی اور سینیٹ کو تخلیق کرنے کا بنیادی مقصد وفاقیت ہے جس کا مقصد گھٹن کے ماحول کو ختم کرکے متناسب نمائندگی دینا ہے۔ا±نھوں نے کہا کہ قومی اسمبلی عوام اور سینیٹ کی وفاقی اکائیوں کی نمائندہ ہے۔رضا ربانی نے پانچ رکنی لارجر بینچ کے ارکان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ سینیٹ کی تشکیل اور مقصد کو سامنے رکھیں۔ رضا ربانی نے مزید کہا کہ پارلیمانی نظام میں دونوں ایوان کبھی اتفاق رائے سے نہیں چلتے۔پاکستان پیپلز پارٹی کے وکیل کا کہنا تھا کہ لازمی نہیں کہ وفاق میں حکومت بنانے والی جماعت کی صوبے میں بھی اکثریت ہو۔ا±نھوں نے کہا کہ اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد سے بھی سینیٹ میں نشستوں کا تناسب بدل سکتا ہے، جس پر بینچ کے سربراہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ سیاسی جماعتوں کے اتحاد سے بھی متناسب نمائندگی پر فرق نہیں پڑتا۔بینچ میں موجود جسٹس اعجاز الااحسن نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ’اگر کسی جماعت نے اتحاد کرنا ہے تو کھلے عام کرے،‘ جس پر رضا ربانی نے کہا کہ ’اتحاد کھلے عام ہی ہوتا ہے لیکن ووٹ دینے کے معاملے کو اوپن نہیں کیا جا سکتا۔‘ان کا کہنا تھا کہ یہ بات ذہن میں رکھنی چاہیے کہ ضروری نہیں کہ حکمران جماعت کی صوبے میں بھی حکومت ہو۔ جسٹس اعجاز الااحسن نے ریمارکس دیے کہ ہر سیاسی جماعت کی عددی تعداد کے مطابق سینیٹ میں نمائندگی ہونی چاہیے۔ا±نھوں نے پاکستان پیپلز پارٹی کے وکیل سے استفسار کیا کہ ووٹ کو خفیہ رکھنے کے پیچھے کیا منطق تھی، جس پر رضا ربانی نے جواب دیا کہ شاید ووٹ کو خفیہ اس وجہ سے رکھا گیا کہ کسی سیاسی جماعت کا صحیح تناسب نہ آ سکے۔رضا ربانی کا کہنا تھا کہ سینیٹ میں نمائندگی صوبائی اسمبلی کی سیٹوں کے تناسب سے ہوتی ہے۔ چیف جسٹس گلزار احمد نے سوال کیا کہ ’بنچ کو متناسب نمائندگی سے متعلق بتائیں۔‘ جس پر جسٹس اعجاز الااحسن نے ریمارکس دیے کہ ’متناسب نمائندگی کا لفظ آرٹیکل 59 اور 51 میں موجود ہے۔‘
رضا ربانی کا کہنا تھا کہ سیاسی جماعتوں کی متناسب نمائندگی قانون سازوں کے ذہن میں تھی۔ انھوں نے کہا کہ متناسب نمائندگی کے نظام کے نیچے بھی تین مختلف نظام موجود ہیں، اور ہر آرٹیکل میں الگ نظام سے متعلق بتایا گیا ہے۔جسٹس اعجاز الااحسن نے ریمارکس دیے کہ نظام جو بھی اپنایا جائے، سینیٹ میں صوبائی اسمبلیوں میں موجود جماعتوں کی نمائندگی ہونی چاہیے۔رضا ربانی نے اپنے دلائل میں کہا کہ اگر اس اصول پر سختی سے عمل کرنا ہے تو پھر پارٹی لسٹ ہونی چاہیے تھی۔ رضا ربانی نے کہا کہ پنجاب میں تحریک انصاف اور مسلم لیگ (ق) اتحادی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ تحریک انصاف اپنے چار یا پانچ سینیٹر میں سے ایک سینیٹر کی نشت ق لیگ کو دے رہی۔
رضا ربانی نے سوال اٹھایا کہ کیا تحریک انصاف کے ایک سینیٹر کم ہونے سے متناسب نمائندگی کی عکاسی ہو گی؟ اس پر بینچ میں موجود جسٹس عمر عطا بندیال نے مسکراتے ہوئے ریمارکس دیے کہ ’تحریک انصاف اور ق لیگ کا پنجاب میں ابھرتا ہوا اتحاد ہے تاہم وہ اس پر مزید بات نہیں کر سکتے۔‘رضا ربانی نے اپنے دلائل میں کہا کہ اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد سے بھی سینیٹ میں نشستوں کا تناسب بدل سکتا ہے جس پر جسٹس اعجاز الااحسن نے ریمارکس دیے کہ سیاسی جماعتوں کے اتحاد سے بھی متناسب نمائندگی پر فرق نہیں پڑتا۔رضا ربانی نے کہا کہ ’متناسب نمائندگی کی جو تشریح عدالت کر رہی ہے، وہ آئیڈیل حالات والی ہے اور سیاسی معاملات کبھی بھی آئیڈیل نہیں ہوتے۔‘وقت کی کمی کی وجہ سے رضا ربانی اپنے دلائل مکمل نہ کر سکے اور وہ پیر کے روز بھی اپنے دلائل جاری رکھیں گے۔ وفاقی وزیر اطلاعات شبلی فراز بھی عدالتی کارروائی کو دیکھنے کے لیے کمرہ عدالت میں موجود تھے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.