Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

برفانی چیتے کی70 فیصد رہائش گاہیں غیردریافت شدہ ہیں، ڈبلیو ڈبلیوایف

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

کراچی: ڈبلیو ڈبلیو ایف نے اپنی تازہ رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ اب تک برفانی چیتوں کی تقریبا 30 فیصد رہائش گاہوں کو ہی دریافت کیا گیا ہے۔ 

’برفانی چیتے کی 100 سالہ تحقیق – معلوماتی جائزہ‘ کے عنوان سے جاری ہونے والی اس رپورٹ میں برفانی چیتے کی اقسام، ان کے رہائشی مقامات اورانہیں درپیش خطرات سے متعلق معلومات کاجائزہ پیش کیاگیا۔

رپورٹ کے مطابق برفانی چیتے کی اکثریت 12 ممالک میں پائی جاتی ہے، جب کہ عالمی سطح پر، ایشیاء کے بلند و بالا پہاڑوں میں برفانی چیتوں کی تعداد لگ بھگ 4 ہزار کے قریب ہوسکتی ہے، برفانی چیتے کی نایاب نسل کورہائشی مقامات کے نقصانات اور غیر قانونی شکار سمیت دیگر کئی خطرات لاحق ہیں، جب کہ موسمیاتی تبدیلی اور درجہ حرارت میں اضافہ برفانی چیتوں کے رہائشی مقامات کے بڑے حصے پر اثرانداز ہوگا۔

رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ برفانی چیتے کےبنیادی اعدادو شمار کی کمی سے ان کے تحفظ میں رکاوٹ پیدا ہوسکتی ہے، برفانی چیتا پیچیدہ مقام پر رہتاہے، ڈبلیو ڈبلیو ایف گلوبل سنو لیپرڈ کےرہنما اور رپورٹ کے مصنف رشی کمار شرما کےمطابق اس نایاب جنگلی حیات کی معلومات حاصل کرنےکے لیے 1970 میں کوششوں کا آغاز کیاگیا تھا۔ تاہم دوردراز مقامات پر اس کی رہائش گاہیں تلاش نہیں کی جاسکتیں، مکمل معلومات نہ ہونے سے اس کی حیثیت ابھی بھی غیردریافت شدہ ہے۔

برفانی چیتے کی نسل کے تحفظ کے لیے مقامی افراد کے بارے میں اس سے متعلق چیثیت اور اس کی اہمیت کو بہتربنانےکی ضرورت ہے، برفانی چیتے کی آبادی کی مکمل اور ٹھوس معلومات تین فیصد سے بھی کم ہیں، پچھلی کئی دہائیوں میں برفانی چیتے پر تحقیق میں اضافہ کیاگیا، جس میں صرف 4 ہاٹ اسپاٹ سامنے آئے ہیں جب کہ برفانی چیتے پر ایک صدی سے زائد کے عرصے میں کی گئی تحقیق میں برفانی چیتے کی 23 فیصد مقامی رہائش گاہیں سامنے آئی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان میں برفانی چیتے کی رہائش گاہ اور آبادی کا سب سے بڑا حصہ سامنے آیاہے، برفانی چیتے کی سب سے زیادہ آبادی بھوٹان میں 76 فیصد، پاکستان میں 24 فیصد اور نیپال میں 19 فیصد ہے۔

ڈبلیوڈبلیو ایف پاکستان کے سینیئر ڈائریکٹر پروگرام رب نواز کے مطابق برفانی چیتےخیبر پختونخوا میں چترال نیشنل پارک، وادی پاسو، خیبر، ہاپپر وادی، بالتورو گلیشیر اور گلگت بلتستان کے علاقوں میں پائے جاتے ہیں، ڈبلیو ڈبلیو ایف نے گلگت بلتستان میں برفانی چیتے اور دیگر جنگلی حیات کی نگرانی کے لیے کیمرے نصب کیے ہیں، ان کا کہنا ہے کہ برفانی چیتوں کی معدوم ہوتی نسل کے بچاؤ کے لیے فوری تحفظ فراہم کرنا ضروری ہے۔
ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان عام سطح پر برفانی چیتوں کو درپیش خطرات اور ان سے متعلق آگاہی کے فروغ کےلیے مہم چلارہی ہے، جب کہ ڈبلیوڈبلیو ایف برفانی چیتے کو غیر قانونی شکار سے بچانے اور ان کی معلومات جمع کرنےکے لیے گلگت بلتستان کے محکمہ جنگلی حیات اور پارکس کے ساتھ کام کر رہا ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.