Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

سپن بولدک طالبان سے چھڑانے کیلئے آپریشن، کمانڈر اور صحافی ہلاک : افغان وفد مزاکرات کیلئے قطر روانہ

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

کابل  :   افغانستان میں طالبان کی پیش قدمی جاری ہے اور طالبان کے قندھار کے سٹرٹیجک ضلع ارغنداب پر بھی قبضے کی اطلاعات ہیں۔ جبکہ افغان سکیورٹی فورسز نے قندھار کے ضلع سپن بولدک سے طالبان کا قبضہ چھڑانے کیلئے آپریشن شروع کردیا ہے ۔ جس کے دوران افغان فورسز کا کمانڈر صادق کرزئی اور بھارتی انعام یافتہ صحافی ہلاک ہوگئے ۔ بتایا گیا ہے کہ قندھار کے ڈپٹی چیف آف جوائنٹ سپیشل آپریشنز صدیق کرزئی اور ان کے ساتھ موجود بھارت کے پولٹزر ایوارڈ یافتہ صحافی دانش صدیقی ہلاک ہوگئے ۔اطلاعات کے مطابق رائٹرز کے چیف فوٹوجرنلسٹ دانش صدیقی اور قندھار کے ڈپٹی چیف آف جوائنٹ سپیشل آپریشنز صدیق کرزئی اکٹھے مارے گئے ۔ طالبان اور افغان فورسز کی سپن بولدک پر قبضے کی لڑائی کے دوران دونوں ایک ساتھ گاڑی میں تھے جب نشانہ بنے اور جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ۔قندھارپولیس کا کہناہے طالبان نے شہریوں کے گھروں میں پناہ لے رکھی ہے ،قندھار سنٹرل جیل پر طالبان کے مسلسل حملوں کے بعد افغان حکام نے 240قیدیوں کو دوسری جیل میں منتقل کر دیا ہے ، طالبان اب تک قندھار کے 12اضلاع پر قبضہ کر چکے ہیں۔افغان پولیس کے مطابق طالبان گزشتہ کئی راتوں سے قندھارسنٹرل جیل پر حملے کر رہے ہیں ۔افغان حکومت نے سپن بولدک کا کنٹرول واپس لینے کا دعویٰ کیا تھا جس پر طالبان نے تردید کر دی اور سپن بولدک بازار اور چمن کراسنگ بارڈر کی ویڈیو جاری کر دی۔ اس کے علاوہ طالبان نے ملیشیا کمانڈر جنرل رشید دوستم کے آبائی شہر صوبے جوزجان کے شہر شبر غان پر بھی مختلف سمتوں سے حملے کئے ہیں۔افغان میڈیا کے مطابق شہر شبرغان کے نواحی علاقوں میں افغان فورسز اور طالبان میں جھڑپیں جاری ہیں۔جبکہ سامنے آنے والی ویڈیوز کے مطابق طالبان نے جنرل دوستم کے فارم ہاؤس پر بھی قبضہ کر لیا تھا۔ ابتدائی طور پر دوستم ملیشیا نے شہر خالی کر دیا تھا، مگر طالبان کے صرف ایک طرف سے علامتی حملے کی اطلاع کے بعد ملیشیا واپس آ گئی۔ جبکہ کپیسا صوبے کے نائب گورنر عزیزالرحمن تواب نجراب ضلع میں صوبائی سکیورٹی چیف کے ہمراہ طالبان کے حملے میں مارے گئے ۔ وہ نجراب صوبے میں ملیشیا کو منظم کرنے کے لیے پہنچے تھے مگر اس سے قبل ہی نشانہ بن گئے ۔تاہم افغان وزارت دفاع کے مطابق سکیورٹی فورسز نے صوبے نمروز کے ضلع چخانسورکا قبضہ طالبان سے واپس لے لیا ہے ،گورنربادغیس نے بھی گزشتہ روز صوبائی دارالحکومت قلعہ نومیں قبائلی عمائدین کی ثالثی میں سیزفائر کااعلان کیاتھا۔افغان حکومت کے مطابق مختلف علاقوں میں جھڑپوں کے دوران سکیورٹی فورسز کے کم از کم 4 اہلکار اور 63 طالبان عسکریت پسند ہلاک ہو گئے ہیں۔دوسری جانب افغانستان حکومت کی اعلیٰ قومی مصالحتی کونسل کے سربراہ ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ سمیت افغان وفد طالبان سے مذاکرات کے لیے قطر روانہ ہوگیا۔ سابق صدر حامد کرزئی نے انہیں رخصت کیا۔ ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ کا کہنا تھا کہ 43 سالہ جنگ کے خاتمے اور امن کے قیام کے لیے ہر ممکن کوشش کریں گے ۔دریں اثنا روس کا کہنا ہے امریکا اور نیٹو نے عجلت میں افغانستان سے فوجی انخلا کیا جس سے افغانستان کی سیاسی اور فوجی مستقبل سے متعلق بڑی غیریقینی صورتحال کا سامنا ہے ، اس صورتحال میں پڑوسی ممالک میں عدم استحکام پھیل جانے کا حقیقی خطرہ موجود ہے ۔ تاشقند میں موجود روسی وزیرخارجہ سرگئی لاروف کا کہنا ہے کہ بدقسمتی سے حالیہ دنوں میں افغانستان کی صورتحال میں تیزی سے بگاڑ دیکھا ہے ۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.