Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

غیر فوجی کالم 

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

تحریر:مجیداحمد جائی

سیکھنے کا عمل ہر عمر میں رہتاہے اور انسان فطرت کے نظاروں سے ،جانوروں سے ،پرندوں سے،بچوں سے ،بڑوں سے سیکھتا رہتا ہے۔میں طالب علم ہوں ،لکھنے ،پڑھنے اور سیکھنے کا جذبہ مجھے جوان رکھتا ہے۔آئے رو زنئی سے نئی کتاب میری دسترس میں ہوتی ہے۔جب میں خود کا احتساب کرتا ہوں اور غوروفکر کے عمل سے گزرتا ہوں تو کئی پہلو میرے سامنے آتے ہیں۔میں گھر بیٹھ کر د±نیا کے کونے کونے کی سیر کر چکا ہوں۔ثقافت و مذہب کے بارے جانکاری پاتا ہوں۔کتابیں مجھے گاﺅں ،گاﺅں ،،شہرشہر اور ملکوں ملکوں کی سیر کراتی ہیں۔میں ننھی سی جان ،قسمت کا سکندر ہوں۔اللہ تعالیٰ نے قلم ہاتھوں میں تھما یا تو پورے ملک ،بلکہ پوری د±نیا کے ادیب اور قلم قرطاس سے جڑے انسانوں سے بھی ملوادیا۔میری لائبریری میں کتابوں کی صورت ہر شعبہ ِفکر کے لوگ بیٹھے ہیں اور میں ا±ن سے محو گفتگو رہتا ہوں۔وہ مسکراتے ہیں تو میں بھی مسکراتا ہوں۔ وہ سنجیدگی سے سر جوڑے ملکی حالات پہ غوروفکر کرتے ہیں تو میں بھی ان کے ساتھ شامل ہو جاتا ہوں۔ یہ خوش قسمتی نہیں تو اورکیا ہے۔میں کتاب سے کیا جڑا، اللہ نے اپنی پیاری تخلیق سے ملادیا۔ایک وقت تھا میرے وہم وگمان میں بھی نہیں تھا کے میں ایسی ایسی شخصیات سے ملوں گا جن تک رسائی خواب و خیال میں بھی نہیں تھی۔اب برگیڈئیر (ریٹائرڈ )صولت رضا کو ہی دیکھ لیجئے۔میرے روبرو بیٹھے ”غیر فوجی کالم “کی صورت محوگفتگو ہیں۔مسکراتے ہیں ،ہنساتے ہیں۔گہرا طنز کرتے ہیں اور مزاح بھی کرتے جاتے ہیں۔ انسان پڑھتے ہوئے مسکراتا بھی جاتا ہے اور غوروفکر بھی کرتا جاتا ہے۔کالموں کی کتاب خشک ہوتی ہے اور پڑھتے ہوئے بوریت ہونے لگتی ہے لیکن ”غیر فوجی کالم “کا معاملہ ا±لٹ ہے بوریت نہیں ،مسکراہٹ کی بہاریں ہیں ،پھولوں جیسی خوشبو ئیں ہیں۔فرماتے ہیں ”لکھنے کا عمل خواہ کسی روپ میں ہو ،سماج میں سوچ و بچار کو رواں رکھنے کے لئے ضروری ہے۔”غیر فوجی کالم “بھی سوچ و بچار کے عمل کو رواں رکھنے کے لیے ایک عاجزانہ کوشش ہے۔“برگیڈئیر (ریٹائرڈ)صولت رضا کسی تعارف کے محتاج نہیں۔آپ مطالعہ کے شوقین ہیں اور اخبار پڑھتے رہتے ہیں تو اس نام سے ضرور واقف ہوں گے۔آپ کے کالم روزنامہ خبریں میں زنیت بنتے رہے ہیں۔آپ آئی ایس بی آر(پاک فوج)سے 31جولائی 2003 کو ریٹائیر منت کے بعد 5،اگست 2003ءکو نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز (NUML)اسلام آباد سے بانی چئیر مین شعبہ ماس کمیونیکشن کی حیثیت سے منسلک ہو گئے۔”غیر فوجی کالم “کا وجود یہاں پنپنے لگا۔آپ لکھتے ہیں ”آغاز میں صرف ایک ہی کلاس تھی۔ڈیپارٹمنٹ بھی نیا تھا ،یوں مناسب وقت اور ماحول میسر آگیا۔“کسی بھی شعبہ سے بندہ جب ریٹائیرڈ ہو کر قلم پکڑتا ہے تو راز و نیاز سے پردے فاش ہوتے ہیں۔زندگی کے تجربات کا نچوڑ سمیٹ کر قلم کی نوک پہ آجاتا ہے اور قرطاس پہ اس کی گواہی ہو جاتی ہے۔یوں یہ سچائی اور گواہی ہمیشہ ہمیشہ کے لئے زندہ و جاوید رہتی ہے۔انسانی وجود مٹی کے سپرد ہو جاتا ہے لیکن اس کا لکھا ہمیشہ کے لئے آنے والی نسلوں کے لئے راہیں متعین کرتا رہتا ہے۔تحریر کبھی نہیں مرتی۔”غیر فوجی کالم “روزنامہ خبریں کی زنیت بن چکے ہیں اب ”صولت رضاصاحب “نے ان کو کتابی صورت میں پیش کرکے ہم پہ احسان کر دیا ہے۔قسطوں میں ،انتظار کے سولی پہ نہیں لٹکایا بلکہ کتابی شکل میں پیش کرکے آسانی فرما دی ہے۔اب آپ کی مرضی ہے،تکیہ کے نیچے رکھ چھوڑیں یا تکیے کے ساتھ بیڈ پہ رکھ دیں۔اس کا مطالعہ کب اور کیسے کرنا ہے اس کی پابندی نہیں ہے۔بس آپ میں مطالعہ کرنے کے جراثیم ہونے چاہییں۔

”غیر فوجی کالم “کتاب224صفحات پر مشتمل معلومات کے خزانوں سے مزین ہے۔اس کا پہلا ایڈیشن دسمبر2016میں شائع ہو ا اور اب یہ دوسرا ایڈیشن ہے۔”غیر فوجی کالم “کتاب میں تمام کالم سیاسی نہیں،غیر سیاسی بھی ہیں۔صولت رضا نے اندر کے راز تک عیاں کر دئیے ہیں۔”گو عمران گو“کالم مجھے یوں بھی بہت اچھا لگا کے اس میں لکھاری کو افسانہ نگار کی صورت میں دیکھتا ہوں۔ذرا یہ اقتباس پڑھیے”مزار قائد پر حاضری کے دوران سر عمران خان اچانک آبدیدہ ہو جائیں گے۔یہ برطانوی تاریخ میں پہلا واقعہ ہوگا کہ کسی برطانوی وزیراعظم کے غیر ملکی دورہ میں میڈیا کے سامنے آنسو بہہ نکلے۔“

”عمران خان اب بھی وقت ہے فیصلہ کی کنجی آپ کے پاس ہے۔پاکستان میں رہ کر سیاست کے ”خوبروتماشائی “کا کردار ادا کرنا ہے یا برطانیہ میں ایک مثالی جمہوری انداز کے ساتھ پیش قدمی کے امکانات کو حقیقت میں تبدیل کرنے کی کوشش۔“

اسی طرح ”عدنا ن شاہد کی تلاش “میں آپ بیتی کی جھلک ملتی ہے۔یوں تو ہر کالم میں مصنف اپنے آپ کو پیش کرتا ہے لیکن چند کالم ایسے بھی ہیں جہاں مکمل طور پر شخصیت عیاں ہوتی ہے۔

”غیر فوجی کالم “کے شروع کے چند کالم پاک افواج کے ترجمان جریدے ”ہلال “میں شائع ہوئے ہیں۔یہ جریدہ مدتوں تو ہفت روزہ رہا۔آج کل میگزین انٹرسروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر)کے زیر اہتمام ہر ماہ شائع ہو رہا ہے۔”غیر فوجی کالم“ کے کالموں کا ح±سن انتخاب ذاتی ہے لیکن قاری ان کا مطالعہ کرتے ہوئے حال اور مستقبل کے خوابوں میں غوطہ زن ضرور ہو جاتا ہے۔اس خوبصورت کتاب کا انتساب ”قارئین کے نام “کیا گیا ہے۔

”غیر فوجی کالم “کتاب ،نام کی طرح اس کی تزئین اور آرائش بھی کمال کی ہے۔سرورق دیدہ زیب ہے اور بیک فلاپ پہ صولت رضا مسکراتے ملتے ہیں۔اس کتاب سے پہلے ”کاکو لیات“(پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول میں زیرِتربیت کیڈٹ کی آپ بیتی )لکھ چکے ہیں جو اب اب نایاب ہے۔ا±مید ہے جلد اس کا نیا ایڈیشن منظر عام پر ہو گا۔”آئی ایس پی آر کے مطابق“جو آئی ایس پی آر افسر کی حیثیت سے تیس برس کی رودادپر مشتمل ہے اور ”نملیات“بانی چئیرمین ماس کمیونیکشن ڈیپارٹمنٹ نمل اسلام آباد کی ڈائری “کی صورت کتب زیر طبع ہیں۔ا±مید واثق ہے جلد ہی ان سے استفادہ ہو گا۔

”برگیڈئیر (ریٹائرڈ)صولت رضا کو پیشگی مبارک باد دیتے ہوئے غیر فوجی سلوٹ پیش کرتے ہیں کیونکہ ہم فوجی نہیں۔ا±مید ہے جس طرح ”غیر فوجی کالم “گہرے طنز اور مزاح پر ہنستی مسکراتی تحریریں پڑھنے کو ملیں آئندہ بھی نگاہیں منتظر اور دل بے چین رہے گا۔اللہ تعالیٰ صولت رضا کو مسکراتا رکھے اور آپ یونہی پیاری پیاری تحریروں سے ہمیں خیرہ کرتے رہیں۔آمین !۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.