Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

سرکاری ملازمین کا ہاکی چوک پر جاری دھرنا بلوچستان ہائیکورٹ نے ختم کرادیا

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

 

کوئٹہ ( سٹی رپورٹر) تنخواہوں میں اضافے اور دیگر مطالبات کے حق میں جاری ہاکی چوک پر دھرنا بلوچستان ہائیکورٹ نے ختم کرادیا حکومتی کمیٹی کو آج ہی گرینڈ الائنس کے ساتھ مذاکرات کے ٹی او آر طے کرنے کا حکم جن نکات پر اتفاق ہوجائے ان سے سوموار تک عدالت کو آگاہ کیا جائے میڑک کے امتحانات کا بائیکاٹ بھی ختم کرادیا گیا تنخواہوں میں 25 فیصد اضافے سمیت اٹھارہ نکات منوانے کیلئے بلوچستان کے سرکاری ملازمین نے گرینڈ الائنس کے زیر اہتمام گزشتہ بارہ روز سے ہاکی چوک پر دھرنا دے رکھاتھا بلوچستان ہائیکورٹ کورٹ نے آئینی درخواست کی سماعت کی دوران سماعت عدالت نے ہاکی چوک پر دھرنا فوری ختم کرنے اور فریقین کے درمیان آج شام چھ بجے مذکرات کے ٹی او آرز طے کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ اٹھارہ نکاتی مطالبات میں جن پر اتفاق ہوجائے ان سے متعلق عدالت کو سوموار کو رپورٹ دی جائے عدالت سوموار سے روزانہ کی بنیاد پر آئینی درخواست کی سماعت کرے گی آئینی درخواست کی سماعت چیف جسٹس بلوچستان ہائیکورٹ جسٹس جمال خان اور جسٹس کامران ملاخیل پر مشتمل دو رکنی بنچ نے کی دوران سماعت فاضل جج کامران ملاخیل نے ریماکس دیتے ہوئے کہا کہ جو اساتذہ میڑک کے امتحانات کا بائیکاٹ ختم نہ کریں ان کو فارغ کرکے جیل بھیج دیا جائے چیف جسٹس بلوچستان ہائیکورٹ نے ایڈیشنل چیف سیکرٹری بلوچستان سے استفسار کیا کہ حکومت عدالت کو آگاہ کرے کہ ایک ہی گریڈ کے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں تفریق کیوں برتی گئی اور کس لئے یہ خلاف آئین کام کیا گیا ملازمین برابری چاہتے ہیں کہ جو حق ایک کو دیا گیا دوسرے کو بھی دیا جائے لیکن مسئلے کو حل کرنے کیلئے سڑک بند کرنا درست نہیں اگر کوئی مسئلے مسائل ہو تو قانون ہاتھ میں لینا نہیں چائیے راستے بند ہونے سے عوام پر مصیبت پڑی ہوئی ہے پرسوں ہائی کورٹ کے ججوں کو بھی روکا گیا کیا یہ خلاف آئین نہیں بتایا جائے سب کو یکساں تنخواہوں مل رہی ہیں یا نہیں عدالت کو آگاہ کیا جائے کہ کس کس کو کتنا مل رہا یے سیکٹریٹ میں نئی گاڑیوں کی بھرمار ہے اور سرکاری کہتی ہے کہ رقم نہیں افسوس کا مقام ہے کہ یونیورسٹی کو بھی حکومت ادھارپر رقم دی رہے ہےوزیر اعلی نے چار نئی گاڑیاں کیوں خریدی یونیورسٹی کے ملازمین کو گذشتہ تین ماہ سے تنخواہوں نہیں ملی اگر یونیورسٹی فیس بڑھائے تو شور مچ جاتا یہ مقام افسوس ہے کہ میڑک کا امتحان ہورہا یے اور اساتذہ ہڑتال پر ہیں اگر میڑک کا ایک بچے کا پرچہ ضالع ہوا تو اساتذہ جیل جائیں گے آئین کی خلاف ورزی پر عدالت خاموش نہیں رہی گی حق لینے کا طریقہ عدالت ہے ہڑتال نہیں آج حکومت اور ملازمین تسلیم کرلیں کی غلطی دونوں جانب سے یے حکومت غیرضروری جائیدادوں کو فروخت کرکے مسائل کو کم کرسکتی ہے آئینی درخواست کی سماعت سوموار تک ملتوی کردی گئی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.