Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

پاکستان کے 22کروڑ عوام اور ان کے حق رائے دہندگی کا احترام کرنا ہوگا: محمود خان اچکزئی 

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

 

کرک (این این آئی) پشتونخواملی عوامی پارٹی کے سربراہ اور پاکستان ڈےموکرےٹک موومنٹ کے نائب صدر محمود خان اچکزئی نے ضلع کرک کلی ٹےری ،کلی درےش خےل مےں منعقدہ عوامی اجتماعات اور مسلم لےگ ن کے ضلعی دفتر مےں کارکنوں اور عوام کے مشترکہ اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ پشتون وطن اور اس کے عوام کی عزت وناموس ہمےں عزےز ہے ، قوم کے حقوق پر نہ کبھی سودا کےاہے نہ کرےنگے ، پشتونوں سمےت دےگر محکموم قوموں کے حقوق کےلئے جدوجہد کررہے ہےں ،پشتون افغان قوم کو متحد ومنظم کرنے اور اس کے حقوق کی جدوجہد کی پاداش مےں ہمےں سزا ئےں دی گئی لےکن ہمےں اپنے قوم وملک کے دےگر اقوام کے حقوق ،برابری کا فےڈرےشن کے مطالبے سے دستبردار نہےں کراےا جاسکا، ہماری مائےں بہنےں اپنے وطن جو خدا کی نعمتوں سے بھی بھری پڑی ہےں کے باوجود اپنے مسافر بچوں کی فرےاد کرتی رہتی ہےںاور جب خدا کی دی گئی نعمتوں پر قبضہ ہوجاتا ہے تو اس کے فرزند دےار غےر مےں محنت مشقت اور بدترےن مسافرانہ زندگی گزانے پر مجبور ہوجاتے ہےں ۔افغانستان ہمارا مادر وطن اور پاکستان ہمارا ملک ہے ،افغانستان مےں ہمساےہ ممالک کی مداخلت اور چالےس سالہ طوےل خونرےز جنگ آج بھی جاری ہے ، سلامتی کونسل کے رکن ممالک کی ذمہ داری ہے کہ وہ جنگ زدہ وزخمی افغانستان کی ترقی وخوشحالی،استقلال، خودمختاری کےلئے ہمساےوں کی مداخلت کے بےن الاقوامی ضمانت ضروری ہے،اقوام متحدہ ،اےساپ، نےٹو، امرےکہ اور دےگر جمہوری ممالک جو اقوام متحدہ کی قرار داد کے تحت افغانستان آئے ہےں جب تک افغانستان مےں ہمساےوں کی مداخلت بند نہےں ہوتی اُس وقت تک افغانستان مےں امن ناممکن ہے۔ پشتون افغان بہادر ، محنت کش لوگ ہےں انگرےزوںودےگر کو پسپا اور اپنی سرزمےن کا بہادری کے ساتھ دفاع کےا اور آج بھی کررہے ہےں ، گاندھی جی اور محمد علی جناح ہمارے لےئے قابل احترام ہےں لےکن پشتون ان دو لےڈروں سے قبل فرنگےوں سے جنگ مےں نبردآزما تھے اور اپنی قربانےوں کے بدولت انگرےز حکمرانوں کو پسپائی سے دوچار کےا تھا۔ زبان کی اہمےت چار آسمانی کتابوں سے واضح ہے ، مادری زبانوں کو قومی زبانوں کا درجہ دےنا ہوگا، پشتونوں کی سےالی ،برابری اور منقسم پشتونوں کو اےک قومی وحدت مےں لانے کےلئے ہمےں اےک متحدہ قومی سےاسی محاذ اور اعلیٰ درجے کے منظم تنظےم کی ضرورت ہے جو اپنے قومی حقوق کی جدوجہد کے سےاسی نظرےات سے لبرےز اور سےاسی تحرےک کا پابند ہوگا۔ آپس کی رنجشوں ، اختلافات کو ختم کرکے صلح کی راہ اپنانی ہوگی ۔ ہمےں ان ہاتھوں کو روکنا ہوگا جو بےدری کےساتھ ہمارے وسائل لوٹ رہے ہےں ،دوسرے کے حق پر پر قبضہ کرنا ظلم اور اپنا حق کسی کو چھوڑنا بے غےرتی کے مترادف ہےں ۔ محمود خان اچکزئی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج ملک مےں جس بات کا رونا روےا جارہا ہے اس کی نشاندہی ہم 1947کے بعد مسلسل کراتے رہے ہےں جس کی پاداشت مےں ہمارے اکابرےن کو عمر قےد کی سزائےں دی گئی ۔ ناعاقبت اندےش حکمرانوں کی ناپسند کرتوتوسے اےک مرتبہ ملک ٹوٹ چکا ہے اور باقی ملک اس وقت سخت ترےن معاشی ، سےاسی ، معاشرتی بحرانوں سے دوچار ہےںاورخارجی محاذ پر تنہائی کا شکار ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو بحرانوں سے نکالنے کےلئے عوام کی ووٹ کی شفافےت اور منتخب پارلےمنٹ طاقت کا سرچشمہ ، ملک مےں آئےن وقانون کی حکمرانی، ملک کے تمام ادارے آئےن مےں متعےن شدہ اختےارات کے پابند نہےں ہونگے اُس وقت تک ملک کے بحران ختم نہےں ہونگے اور ملک مےں سول مارشل لاءکی بجائے سوےلےن اتھارٹی اور سول حکومت کی بحالی ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک مےں صاف شفاف غےر جانبدارانہ انتخابات کا انعقاد لازمی ہے اور ملک کوحقےقی جمہورےت کے قےام اسے بدترےن بحرانوں سے نجات اور ترقی وخوشحالی کی جانب گامزن کرنا ہے تو ملک کے 22کروڑ عوام اور ان کے حق رائے دہندگی کا احترام کرنا ہوگا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.