Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

’’ مجھے جتوادو ‘‘ ٹرمپ کا عہدیدار پر دھاندلی کیلئے دباو

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

واشنگٹن :  امریکی صدر ٹرمپ نے ریاست جارجیا میں جوبائیڈن کی فتح کو ہار میں بدلنے کیلئے ریاست کے سیکرٹری پر دباو ڈالا اور انہیں اس کام کے لیے منانے کی کوشش کی،دونوں کے مابین ہونیوالی ٹیلیفونک گفتگو کی ریکارڈنگ امریکی اخبار نے جاری کردی۔اس ریکارڈنگ میں صدر ٹرمپ ریپبلکن پارٹی سے تعلق رکھنے والے ریاست جارجیا کے سیکرٹری آف سٹیٹ بریڈ ریفنسپرجر سے یہ کہتے سنائی دیتے ہیں کہ مجھے صرف 11780 ووٹ تلاش کرنے ہیں۔صدرکی اس بات پر بریڈ ریفنسپرجر کہتے ہیں کہ جارجیاکے انتخابی نتائج درست ہیں۔ نومبر کے صدارتی انتخاب میں جارجیا میں ڈیموکریٹ امیدوار جو بائیڈن نے کامیابی حاصل کی تھی۔ واشنگٹن پوسٹ کی جانب سے فون کال کے جو اقتباسات جاری کیے گئے ہیں ان میں صدر ٹرمپ اس بات پر مُصر رہتے ہیں کہ میں نے جارجیا میں انتخاب جیتا ہے اور وہ بریڈ ریفنسپرجر سے کہتے ہیں کہ اس میں کچھ غلط نہیں کہ اگر وہ کہیں کہ ہم نے دوبارہ گنتی کی ہے ۔اس بات پر بریڈ ریفنسپرجر کہتے سنائی دیتے ہیں کہ جنابِ صدر آپ کا جو دعویٰ ہے اس میں مسئلہ یہ ہے کہ آپ کے اعدادوشمار درست نہیں ہیں۔اسی گفتگو کے دوران ٹرمپ یہ بھی کہتے ہیں کہ افواہ ہے کہ کچھ ووٹ پھاڑ دیئے گئے جبکہ فلٹن کاؤنٹی کے علاقے میں ووٹنگ مشینری بھی مقررہ مقام سے منتقل کی گئی۔ اس کے بعد ٹرمپ بریڈ ریفنسپرجر کو ممکنہ قانونی کارروائیوں کے بارے میں خبردار کرتے بھی سنائی دیتے ہیں۔امریکی صدرنے کہاکہ تم جانتے ہو کہ انھوں نے کیا کیا اور تم اسے رپورٹ نہیں کر رہے ہو۔ یہ ایک جرم ہے ۔ تم ایسا نہیں ہونے دے سکتے ۔ یہ تمہارے اور تمہارے وکیل رائن کے لیے بڑا خطرہ ہو سکتا ہے ۔پھر صدر ٹرمپ مزید 11780 ووٹوں کا تقاضا کرتے ہیں جو انھیں ملنے کی صورت میں ریاست میں ان کے ووٹوں کی تعداد جو بائیڈن کے ووٹوں سے بڑھ جاتی۔وہ بریڈ ریفنسپرجر سے کہتے ہیں کہ ریاست میں انتخابی نتائج کا دوبارہ جائزہ لیں،تم ان کا دوبارہ جائزہ لے سکتے ہو لیکن یہ جائزہ وہ افراد لیں جو جواب تلاش کرنا چاہتے ہوں، وہ نہیں جو جواب ڈھونڈنا نہیں چاہتے ۔اس پر بریڈ ریفنسپرجر جواب میں کہتے ہیں کہ جنابِ صدر! آپ کے پاس لوگ ہیں جو معلومات فراہم کرتے ہیں اور ہمارے پاس اپنے لوگ ہیں جو ایسا کرتے ہیں اور پھر بات عدالت کے سامنے جاتی ہے جسے فیصلہ کرنا ہے ۔ ہم اپنے اعدادوشمار پر قائم ہیں اور ہمیں یقین ہے کہ ہمارے اعدادوشمار درست ہیں۔ امریکی سینیٹ میں ڈیموکریٹ پارٹی کے چیف وہپ ڈک ڈربن نے کہا ہے کہ صدر کی بریڈ ریفنسپرجر کو فون کال ایک خطرناک اقدام تھا ، یہ عمل مجرمانہ تحقیقات کا متقاضی ہے ۔ نومنتخب نائب صدر کملا ہیرس نے صدر ٹرمپ کی اس گفتگو کو طاقت کا غلط استعمال قرار دیا ۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.