Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

صدر ٹرمپ نے پاکستان کا ذکر کب کب اور کہاں کہاں کیا؟(آخری حصہ )

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

ثقلین امام

سنہ 2018 میں اپریل کی 20 تاریخ کو ایک ٹویٹ میں صدر ٹرمپ ا±س پ±ر اسرار پاکستانی کا دوبارہ سے ذکر کرتے ہیں جس کا بقول ان کے، ہلری کلنٹن کے غائب ہوجانے والے کمپیوٹر میں ذکر تھا۔ وہ ایف بی آئی سے مطالبہ کر رہے تھے کہ وہ کارروائی کرے۔ تاہم بعد میں انھوں نے اس ٹویٹ کو ڈیلیٹ کر دیا تھا۔اس کے بعد 7 جولائی کو انھوں ایک مرتبہ پھر ہلری کلنٹن اور ڈیموکریٹس کے بارے میں انتخابی دھاندلی کا الزام عائد کیا۔ انھوں نے اس ٹویٹ میں اس پاکستانی کا بھی ذکر کیا۔ اس مرتبہ انھوں نے اس کا ‘پاکستانی فراڈسٹر’ کہہ کر ذکر کیا اور ان سب کے خلاف انکوائری کا مطالبہ کیا۔اسی معاملے پر 16 جولائی سنہ 2108 کو انھوں نے روسی صدر ولادیمیر پوتن کے ہمراہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ ‘ا±س سرور کو ڈھونڈے بغیر کوئی بات نیں کی جا سکتی ہے۔ ا±س پاکستانی کا سرور (کمپیٹور) کہاں گیا جو ڈی این سی کے لیے کام کرتا تھا۔ وہ سرورز (کمپیوٹرز) کہاں ہیں۔’پھر اگلے دن ہیلسنکی میں اسی موضوع پر ایک انٹرویو میں بات کرتے ہوئے انھوں نے پاکستانی کمپوٹر والے نامعلوم شخص کا ذکر کیا۔ اگست کی 30 تاریخ کو بلومبرگ سے بات کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے اس پاکستانی کا مبہم انداز میں نام بھی لیا ‘اعوان فرام پاکستان۔’
صدر ٹرمپ نے 18 نومبر کو معروف امریکی صحافی کرس ویلیس کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ ‘اسامہ بن لادن پاکستان میں ایک مینشن میں رہ رہا تھا۔ وہ ملٹری اکیڈمی کے قریب رہ رہا ھا اور ہم انہیں سوا ارب ڈالر سالانہ دے رہے تھے۔ میں نے یہ رقم بند کردی کیونکہ وہ ہمارے لیے کچھ نہیں کر رہے تھے۔’19 نومبر کو صدر ٹرمپ نے ٹویٹ میں کہا ‘ہمیں اسامہ بن لادن کو کافی پہلے پکڑ لینا چاہیے تھا۔ میں نے اس کا ذکر ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر حملے سے پہلے میں نے اپنی کتاب میں کیا تھا۔ صدر کلنٹن نے موقع ضائع کیا۔ ہم نے پاکستان کو اربوں ڈالرز دیے اور انھوں نے ہمیں اس کے بارے میں کچھ نہیں بتایا۔ احمق!’اگلے دن یعنی 20 نومبر سنہ 2018 کو انہوں نے امریکی صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ‘میں چاہتا ہوں کہ پاکستان ہماری مدد کرے۔ ہم اب پاکستان کو ایک ارب تیس کروڑ ڈالرز نہیں دے رہے ہیں۔ ہم ان کو کچھ بھی نہیں دے رہے ہیں کیونکہ انہوں نے ہمارے مدد کے لیے کچھ نہیں کیا۔’سنہ 2019 میں 2 جنوری کو صدر ٹرمپ نے اپنی کابینہ کے اجلاس میں کہا کہ ‘ہم پاکستان کے ساتھ بہترین تعلقات بنانا چاہتے ہیں لیکن وہ ہمارے دشمنوں کو بناہ دیتے ہیں۔ اس لیے میں پاکستان کے نئے رہنما اور ان کے نئے لوگوں سے ملاقات کا منتظر ہوں۔ اس کام میں زیادہ تاخیر نہیں ہو گی۔’ اس اجلاس میں پاکستان کا بار بار ذکر ہوا۔اسی طرح صدر ٹرمپ نے 10 جنوری کو شین ہینیٹی کے ساتھ انٹرویو میں پاکستان سے مختلف قسم کے بیانات کا ذکر کیا۔ اور پھر ایک خاموشی۔ ڈیڑھ سو کے قریب میکسیکو سے آنے والے غیر قانونی تاریکین وطن سرحد عبور کرتے ہوئے پکڑے گئے تھے۔ صدر ٹرمپ نے 14 جنوری کو ایک تقریر میں اعلان کیا کہ ان میں تین پاکستانی بھی تھے۔
جب پاکستان اور انڈیا کے درمیان پلواما میں خودکش حملے کے بعد تعلقات خراب ہوئے تو صدر ٹرمپ نے 22 فروری کو چینی رہنما لیو ہی کے ہمراہ ایک صحافی کے سوال کے جواب میں کہا کہ ‘اس وقت دونوں ملکوں کے درمیان بہت خراب حالات ہیں اس لیے اس میں مداخلت کرنا بہت ہی خطرناک ہوگا۔’پھر انہوں نے 28 فروری کو کہا کہ پاکستان اور انڈیا سے اچھی خبریں آرہی ہیں۔ یہ وہ وقت ہے جب انڈیا اور پاکستان کی فضاییہ اپنی اپنی کارروائی مکل کر چکے تھے۔ ‘وہ ہمارے کہنے پر عمل کر رہے ہیں اور ہم انہیں تصادم سے روکنے کی کوشش کر رہے ہیں۔’انھوں نے اس موقع پر اپنی امید کا اظہار کیا تھا کہ دونوں کے درمیان کشیدگی کم ہونے جا رہی ہے۔ انھوں نے اس دوران پاکستان کا نام درجن ایک مرتبہ لیا۔ 20 مارچ کو امریکی میرین ملاقات کے بعد پریس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ پاکستان سے تعلقات بہتر ہو رہے ہیں اور وہ ملاقات کریں۔’میرا خیال ہے کہ اب ہمارے پاکستان کے ساتھ تعلقات بہت اچھے ہیں۔’ 17 جولائی کو انھوں نے ممبئی میں حملے کے مبینہ ماسٹر مائینڈ کی پاکستان میں گرفتاری پر کہا کہ یہ کامیابی امریکی دبو¿ کی وجہ سے ممکن ہوئی ہے: ‘ہم نے دو برسوں سے دباو¿ ڈالا ہوا ہے۔’
جب پاکستان کے وزیرِ اعظم عمران خان امریکہ کے سرکاری دورے پر گئے تو وہاں صدر ٹرمپ نے ان کا نہ صرف گرمجوشی سے استقبال کیا بلکہ پریس بریفنگ کے دوران پاکستان اور انڈیا کے درمیان کشمیر کے مسئلے میں مصالحتی کردار ادا کرنے کی بھی پیش کش کی۔صدر ٹرمپ نے کہا کہ ‘دہشت گردی، فوجی تعاون اور باہمی تجارت کے لیے پاکستان کو سہولتیں دیے جانے کے امور پر بھی بات چیت ہوئی’ اور ایک مرتبہ پھر سے دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات میں برف پگھلنا شروع ہو گئی۔جب انڈیا ان کی مصالحت کی پیش کش پر چراغ پا ہوا تو صدر ٹرمپ نے یکم اگست سنہ 2019 میں عمران خان کے پاکستان واپس جانے کے بعد وضاحت دی کہ امریکی کردار انڈین وزیرِ اعظم مودی کے راضی ہونے پر ہو گا۔ اسی کے ساتھ انہوں نے عمران خان کی کافی تعریف کی۔2 اگست کو انھوں نے اپنے صدارتی ہیلی کاپٹر پر روانگی سے قبل صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ‘میں پاکستان سے پچھلے ہفتے آنے والے ایکس ایسے شریف شخص سے ملا ہوں جسے میں پسند کرتا ہوں۔ اس سے ملاقات خوشگوار رہی اور ہماری کیمسٹری ملتی ہے۔’19 اگست کو صدر ٹرمپ نے ٹویٹ کی کہ انھوں نے انڈیا اور پاکستان کے وزرائے اعظم سے ‘تجارت، سٹریٹیجک پارٹنرشپ پر بات چیت کی، اور خاص کر انڈیا اور پاکستان دونوں سے کہا کہ وہ کشمیر میں کشیدگی کم کریں۔ حالات سنگین ہیں مگر گفتگو اچھی تھی۔’اگست کی 21 تاریخ کو صدر ٹرمپ نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف سب کو جنگ کرنا ہو گی۔ اور اسی گفتگو میں انہوں نے کہا کہ اس میں روس، ایران، ترکی، عراق، افغانستان کے ساتھ پاکستان اور انڈیا کا بھی نام لیا۔
صدر ڈونلڈ ٹرمپ اگست کے آخری ہفتے میں انڈیا کے سرکاری دورے پر گئے۔ وہاں 26 اگست کو وزیر اعظم نریندر مودی سے ملاقات کے بعد انھوں نے صحافیوں سے بات چیت کی اور کہا کے دیگر امورکے علاوہ انھوں نے کشمیر کے مسئلے پر بھی بات کی۔’ہم نے گذشتہ شب کشمیر پر بھی بات کی۔ اور وزیرِ اعظم محسوس کرتے ہیں کہ حالات ان کے قابو میں ہیں۔ مجھے معلوم ہے کہ ان کی پاکستان سے بات چیت ہو رہی ہے اور مجھے یقین ہے کہ دونوں اپنی بہتری کے لیے کچھ کریں گے۔ میں نے گذشتہ شب اس موضوع پر تفصیلی بات کی۔’اگلے ماہ یعنی ستمبر کی 9 تاریخ کو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے انڈیا اور پاکستان کے درمیان ایک مرتبہ پھر کشمیر کے مسئلے پر ثالثی کی پیشکش کرتے ہوئے کہا ہے کہ ‘اگر دونوں ممالک چاہیں تو وہ مدد کے لیے تیار ہیں۔ میں ان دونوں کی مدد کے لیے تیار ہوں۔ انہیں معلوم ہے کہ ہم تیار ہیں۔’اسی ماہ کیونکہ مختلف ممالک کے صدور اور وزرائے اعظم اقوام متحدہ کے سالانہ اجلاس سے خطاب کرنے امریکہ آرہے تھے تو اس موقع پر ستمبر کی 16 تاریخ کو صدر ٹرمپ نے کہ وزیرِ اعظم مودی سے ملاقات کریں گے، ‘ہم پاکستان اور انڈیا (کہ رہنماو¿ں) سے ملیں گے۔ اور میرے خیال میں کافی پیش رفت ہوچکی ہے۔’دو روز کے بعد انھوں نے پھر کہا کہ ان کے انڈین وزیرِ اعظم نریندر مودی کے ساتھ بہت اچھے تعلقات ہیں اور ساتھ ساتھ پاکستان اور انڈیا دونوں کے ساتھ زبردست تعلقات ہیں۔ 23 ستمبر کو اقوام متحدہ ہی میں صدر ٹرمپ کی پاکستانی وزیرِ اعظم عمران خان سے ملاقات ہوئی جس میں پاکستان کے ساتھ بہتر تعلقات کا اعادہ کیا۔اگلے دن صدر ٹرمپ کی ملاقات انڈین وزیراعظم نریندر مودی سے ہوئی۔ مودی نے صدر ٹرمپ سے پاکستان کی ‘دہشت گردی’ کا ذکر کیا تو انہوں نے ایران کی دہشت گردی کا بھی ذکر کیا۔تاہم صدر ٹرمپ نے اس یقین کا بھی اظہار کیا کہ ‘وزیر اعظم مودی اور وزیراعظم عمران خان دونوں جب مل کر کام کریں گے تو ایک دوسرے کو جاننا شروع کردیں گے’۔نیو یارک میں اقوام متحدہ میں امریکی مشن کے سٹاف سے بات کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے مختلف عالمی رہنماو¿ں سے اپنی ملاقاتوں کا جب ذکر کیا تو انھوں نے فخر سے کہا کہ ‘کئی ایک بہت اچھی باتیں ہو رہی ہیں جن میں پاکستان اور انڈیا کے درمیان مسائل پر بات چیت، شمالی کوریا پر بات چیت ہو رہی ہے۔’اس کے بعد صدر ٹرمپ پاکستان کا ذکر جنوری کی 21 تاریخ سنہ 2020 میں اس وقت کرتے ہیں جب ان کی پاکستان کے وزیرِ اعظم عمران خان کے ساتھ ورلڈ اکنامکس فورم ڈیووس میں ملاقات کرتے ہیں۔’ہم دونوں کے درمیان بہت اچھے تعلقات ہیں۔ ہم جتنے اب پاکستان کے قریب ہیں پہلے کبھی بھی نہیں رہے۔’اگلے دن جب صدر ٹرمپ ایک امریکی چینل سی این بی سی کو انٹرویو دیتے ہیں تو وہ اپنی کارکردگی بیان کرتے ہوئے دیگر ممالک کے علاوہ پاکستان کے ساتھ اچھے تعلقات کا ذکر کرتے ہیں۔ لیکن اسی دن وہ ڈیموکریٹس پر تنقیدوالی ری ٹویٹ کرتے ہیں۔’ڈیموکریٹس اور شیفٹی شیف جن کی سینیٹ کے سامنے پیش کی گئی رپورٹ جھوٹ اور غلط بیانی سے بھری ہوئی تھی، اب یہ بیان کرنے سے گریز کر رہے ہیں کہ اوبامہ انتظامیہ نے جن ملکوں کی امداد روکے رکھی ان میں مصر، ہونڈوراس، میکسیکو اور یوکرین سمیت پاکستان بھی شامل تھا۔’
سنہ 2020 میں فروری کی 24 تاریخ کو جب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے احمدآباد، انڈیا میں ‘نمستے ٹرمپ’ تقریب میں شرکت کی تو انہوں نے جہاں انڈیا سے اچھ تعلقات کا ذکر کیا تو ساتھ ہی پاکستان کے بارے میں بھی کہا کہ ‘ہمارے پاکستان کے ساتھ بھی اچھے تعلقات ہیں۔’اگلے دن انڈین وزیرِ اعظم نریندر مودی کے ہمراہ صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے کہا کہ ‘ہمارے مذاکرات کے دوران وزیرِ اعظم نریندر مودی اور میں نے اس بات کا عزم کیا کہ ہم اپنے شہریوں کو اسلامی دہشت گردی سے محفوظ رکھیں گے۔ اور اسی لیے امریکہ ایسے دہشت گردوں سے لڑنے کے لیے پاکستان سے مل کر بامقصد کام کر رہا ہے۔’اسی برس فروری ہی کی 29 تاریخ کو جب کورونا وائرس کی وبا پھوٹی تو صدر ٹرمپ نے ایک مرتبہ پھر پاکستان کے تعاون کا ذکر کیا۔ 22 اپریل سنہ 2020 کو صدر ٹرمپ نے پاکستان کے وزیرِاعظم عمران خان سے ٹیلی فون پر بات کی اور پاکستان کی کورونا وائرس کے خلاف کاوشوں میں مکمل تعاون کے عزم کا اظہار کیا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.