Daily Mashriq Quetta Urdu news, Latest Videos Urdu News Pakistan updates, Urdu, blogs, weather Balochistan News, technology news, business news

قومی سلامتی کا تصور ایک جائزے کے عمل سے گزر رہا ہے، ترجمان دفتر خارجہ

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اسلام آباد  : بھارت کے ساتھ تجارت کی بحالی کے خیال پر تنازع میں دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ قومی سلامتی کا جائزہ لیا جارہا ہے۔

ہفتہ وار پریس بریفنگ کے دوران ترجمان دفتر خارجہ زاہد حفیظ چوہدری نے کہا کہ ‘پاکستان کی قومی سلامتی کے مفادات کا تحفظ کرنے کا بھرپور عزم رکھتے ہوئے ہمارا زور جیو پولیٹکس سے جیو اکنامکس میں تبدیل ہورہا ہے’۔

ان کا کہنا تھا کہ قومی سلامتی کا تصور بھی ایک جائزے کے عمل سے گزر رہا ہے جس کا مرکز معاشی تحفظ ہے۔تاہم انہوں نے واضح کیا کہ جموں کشمیر کے تنازع پر پاکستان کے اصولی مؤقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے جو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں میں موجود ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ سے متحدہ عرب امارات کی پاکستان اور بھارت کے درمیان بات چیت میں پس پردہ سہولت کاری کی رپورٹس پر تبصرہ کرنے کا کہا گیا اور پوچھا گیا کہ کیا یہ سچ ہے کہ نئی امریکی حکومت اور دیگر ممالک پاکستان پر بھارت کے ساتھ رابطوں کے لیے زور ڈال رہے ہیں؟اس کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان بھارت کے ساتھ مذاکرات سے کبھی نہیں کترایا اور ہمیشہ ‘بامعنی مذاکرات’ کے ساتھ ساتھ مسئلہ کشمیر سمیت تمام تنازعات کے پر امن حل پر زور دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ ‘ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ خطے میں پائیدار امن، سیکیورٹی اور ترقی دیرینہ مسئلہ کشمیر کے حل پر منحصر ہے’۔

انہوں نے مزید کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے واضح طور پر پاکستان کی خطے میں امن کی خواہش کا اظہار کرتے ہوئے متعدد مرتبہ کہا ہے کہ اگر بھارت ایک قدم امن کی جانب اٹھائے گا پاکستان 2 قدم آگے بڑھے گا۔ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ ہماری قیادت کے حالیہ بیانات پاکستان کی خطے میں امن و سلامتی کی خواہش کے عکاس ہیں تاہم اب معنی خیز اور نتیجہ خیز بات چیت کے لئیے سازگار ماحول پیدا کرنا بھارت پر منحصر ہے’۔انہوں نے اس سوال کا جواب نہیں دیا کہ کیا ای سی سی کی جانب بھارت سے اشیا کی درآمد کی اجازت کے فیصلے میں دفر خارجہ شامل تھا اور اس کے بجائے وفاقی کابینہ کی جانب سے مذکورہ فیصلے کو مؤخر کرنے کا حوالہ دیا۔زاہد حفیظ چوہدری نے کابینہ اجلاس کے بعد وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے بیان کا بھی حوالہ دیا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ بھارت کے ساتھ تعلقات کی بحالی اس وقت تک ممکن نہیں جب تک بھارت 5 اگست 2019 کے یک طرفہ اقدامات واپس نہ لے لے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.