نواز شریف کو علاج کے لیے بیرون ملک جانا چاہیے،مریم نواز

لاہور(مشرق نیوز)پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے اپنے والد اور پاکستان کے سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کی صحت پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ انھیں علاج کے لیے ملک سے باہر چلے جانا چاہیے۔جمعہ کو لاہور میں عدالت میں پیشی کے موقع پر جب مریم نواز سے یہ سوال کیا گیا کہ کیا نواز شریف ملک سے باہر جا رہے ہیں تو ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی صحت خراب ہے اور انھیں علاج کے لیے بیرون ملک جانا چاہیے۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ نواز شریف کی صحت کے معاملے پر کوئی سمجھوتا نہیں کیا جا سکتا۔اس سوال پر کہ کیا نواز شریف بیرون ملک جانے کے لیے مان گئے ہیں مریم نواز کا کہنا تھا کہ ’یہ الگ بحث ہے۔‘مسلم لیگ ن کی نائب صدر جمعے کو چوہدری شوگر ملز کیس میں عدالت میں پیش ہوئیں اور ان کا کہنا تھا کہ ’آج بھی نواز شریف صاحب کی طبیعت بہت خراب ہے اس کے باوجود عدالت میں حاضر ہوئی ہوں۔‘مریم نواز کا کہنا تھا کہ ان کے والد کا پلیٹلیٹس روزانہ کی بنیاد پر اتار چڑھاو¿ کا شکار ہیں۔ ’نواز شریف کے پلیٹلیٹس 20 ہزار تک آ گئے ہیں۔ ملک میں پلیٹلیٹس میں اضافے کے لیے جو بھی علاج دستیاب تھا وہ کروا لیا ہے، لیکن یہ علاج کام نہیں کر رہا اور ان کی بیماری کی وجہ پتا نہیں چل رہی۔‘مریم نواز کا کہنا ہے کہ ’نواز شریف کے پلیٹلیٹس 20 ہزار تک آ گئے ہیں۔ ملک میں جو بھی علاج میسر تھا وہ کروا لیا ہے لیکن ان کی بیماری کی وجہ پتا نہیں چل رہی‘جب ان سے سوال ہوا کہ کیا نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالے جانے کے حوالے سے شریف خاندان نے کوئی درخواست دی ہے تو مریم نواز کا کہنا تھا کہ ’اس بارے میں مجھے کوئی معلومات نہیں ہیں۔ میں گھر جا کر شہباز شریف سے پوچھوں گی کیونکہ ان معاملات کو وہ دیکھ رہے ہیں۔‘ان کا کہنا تھا کہ وہ بیرون ملک سفر نہیں کر سکتیں کیونکہ ان کا پاسپورٹ عدالت میں جمع ہے۔ ’میری خواہش ہو گی۔۔۔ یہ بہت مشکل ہو جائے گا کہ میاں صاحب علاج کے لیے باہر چلے جائیں اور میں نہ جا سکوں کیونکہ مجھے ان کی بہت فکر ہوتی ہے۔ لیکن دنیا کے جس کونے میں بھی علاج میسر ہو میاں صاحب کو وہاں جانا چاہیے۔‘یاد رہے کہ مریم نواز کو چوہدری شوگر ملز کیس میں لاہور ہائی کورٹ سے ضمانت پر رہائی ملنے کے بعد بدھ کی صبح رہا کر دیا گیا تھا۔مریم نواز کی رہائی کے بعد سروسز ہسپتال میں زیرِ علاج نواز شریف کو بھی جاتی امرا میں ان کی رہائش گاہ پر منتقل کر دیا گیا۔پاکستان مسلم لیگ (ن) کی ترجمان مریم اورنگزیب نے بدھ کو جاری کیے جانے والے ایک بیان میں کہا تھا کہ ڈاکٹرز نے مریم نواز شریف کو والد کی صحت کی بنا پر سخت حفاظتی تدابیر اختیار کرنے کی ہدایت کی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

کرتارپور افتتاحی تقریب میںسنی دیول شرکت کرین گے، سدھو کو بھی اجازت

جمعہ نومبر 8 , 2019
Share on Facebook Tweet it Share on Google Email نئی دہلی(مشرق نیوز) نامور بالی ووڈ اداکار وسیاستدان سنی دیول اور نوجوت سنگھ سدھو کرتارپور راہداری کے افتتاح کے موقع پر کل پاکستان آئیں گے۔اداکار سنی دیول کی پاکستان آمد کی تصدیق بھارتی پنجاب کے وزیراعلیٰ کیپٹن امریندر سنگھ نے گزشتہ […]

چیف ایڈیٹر

سید ممتاز احمد

قارئین اور ناظرین کو لمحہ لمحہ باخبر رکھنے کے لئے” مشرق “ویب سائٹ اور” مشرق“ ٹی وی کااجراءکیاگیا ہے۔روزنامہ” مشرق“ کا قیام1962ءمیں عمل میں آیا تھا ۔یہ اخبار پاکستان کی جدید صحافت کے علمبردار آئین کی بالادستی ،جمہوری قدروں کے فروغ اور انسانی حقوق کے تحفظ کاعلم بلند کرنے کے عزم کے ساتھ دنیائے صحافت میں آیا تھا ۔ ”مشرق “نے جدید تقاضوں کے مطابق اپنے قارئین اور دنیا بھر میں پاکستانیوں کو باخبر رکھنے کے لئے ویب سائٹ اور ویب ٹی وی کا جناب سید ممتاز احمد شاہ چیف ایڈیٹر مشرق گروپ آف نیوزپیپرز کی نگرانی میں اجراءکیاہے ۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اقلیم صحافت کے درخشندہ ستارے سید ممتاز احمد کا شمار پاکستانی صحافت کے اکابرین میں ہوتا ہے۔زندگی بھر قلم وقرطاس اور پرنٹ میڈیا ہی ان کا اوڑھنا بچھونا رہا۔سید ممتاز احمد شاہ نے آج سے 50 برس قبل صحافت جیسی وادی ¿ پرخار میںقدم رکھا۔ضیائی مارشل لا کے دور میں کئی مراحل آئے جب قلم اور قرطاس سے رشتہ برقرار اور استوار رکھنا انتہائی جانگسل ہوچکا تھا لیکن وہ کٹھن اور دشوار گزار راستوں پر سے گزرتے رہے لیکن ان کے پایہ¿ استقلال میں کبھی لغزش دیکھنے سننے میں نہیں آئی۔ واضح رہے کہ سید ممتاز احمد نے ملک کے اہم ترین انگریزی اخبار ”ڈان“ ”جنگ“ ”دی نیوز“ اور روزنامہ ”مشرق“ میں اپنی گراں قدر خدمات انجام دی ہیں۔ اور ان کا مشرق کے ساتھ صحافت کا سفر جاری ہے۔