فضل الرحمن را کے ایجنڈے پر چل رہے ہیں،نمٹ لیں گے،غلام سرور

اسلام آباد (بیورورپورٹ)وفاقی وزیر غلام سرور خان نے کہاہے فضل الرحمن کا کوئی مسئلہ ہے تو ہم بات کرنے کیلئے تیار ہیں،فضل الرحمن ایل او سی پر دھرنا دیں حکومت مکمل ساتھ دےگی،جس طرح کی بھی مولانا کی حکمت عملی ہوگی ویسی ہی ہماری حکمت عملی ہوگی،مولانا کو کدھر روکنا ہے کیا کرنا ہے وقت پر بتائیں گے، مولانا کے مقاصد وہی ہیں جو را کے مقاصد ہیں،مسلم لیگ کی اکثریت نوازشریف سے اختلاف کر رہی ہے۔ ہفتہ کو وزیر ہوا بازی غلام سرور خان نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ مولانا فضل الرحمان ایل او سی پر دھرنا دیں حکومت مکمل ساتھ دےگی۔ انہوںنے کہاکہ پاکستان کشمیریوں کی بات کرتا ہے اور مولانا پاکستان کے خلاف بات کرتے ہیں۔انہوںنے کہاکہ مولانا فضل الرحمان کو کشمیر کے مسئلے پر حکومت کا ساتھ دینا چاہیے۔انہوںنے کہاکہ جس طرح کی بھی مولانا کی حکمت عملی ہوگی ویسی ہی ہماری حکمت عملی ہوگی۔انہوںنے کہاکہ مولانا جو کہہ رہے ہیں کیا وہ کر بھی سکیں گے اسی طرح ہماری بھی حکمت عملی ہوگی۔انہوںنے کہاکہ مولانا کو کدھر روکنا ہے کیا کرنا ہے وقت پر بتائیں گے۔انہوںنے کہاکہ وزیر اعظم نے کہا ہے کہ اگر مولانا کو کوئی مسئلہ ہے تو بات کریں۔انہوںنے کہاکہ جس وقت نوازشریف نے کہا کہ سرحد کے اس پار اور دوسری پار سب لوگ ایک ہیں۔انہوںنے کہاکہ نوازشریف نے جب دو قومی نظریہ کی نفی کی تب مولانا نے دھرنہ کیوں نہ دیا۔انہوںنے کہاکہ لوٹ کھسوٹ میں ملوث افراد اور مولانا فضل الرحمان ریفرنس سے بچنا چاہتے ہیں۔انہوںنے کہاکہ آج کشمیر اور مولانا پر ہی جواب دونگا میڈیا اس تک ہی محدود رکھے۔انہوںنے کہاکہ ہمارے دھرنے کے مقاصد بالکل واضح تھے اور مولانا کے پاس دھرنے کی وجہ کیا ہے؟۔انہوںنے کہاکہ سرکاری اعزازیہ اور گھر لینے کے علاوہ مولانا فضل الرحمان کا کام ہی کیا تھا۔انہوںنے کہاکہ ہمارے اسکول یونیورسٹی درگاہوں پر حملے ہوئے کبھی مولانا فضل الرحمان بولے؟، کبھی بلوچستان میں دہشتگردی کرنے والے کلبھوشن کے خلاف بات کی ہے؟۔ انہوںنے کہاکہ مولانا صاحب پاکستان بن چکا ہے آپ علماءاسلام پاکستان کی نمائندگی کریں۔انہوںنے کہاکہ مولانا کے مقاصد وہی ہیں جو را کے مقاصد ہیں۔انہوںنے کہاکہ آج دن تک اپوزیشن ایک پلیٹ فارم پر موجود ہی نہیں ہے۔ انہوںنے کہاکہ اگر نواز شریف کہتے وہ بھی وہی لائن رکھتے ہیں جو مولانا کی ہے۔ انہوںنے کہاکہ مسلم لیگ کی اکثریت نوازشریف سے اختلاف کر رہی ہے۔

Pic12-031 RAWALPINDI: Oct12- Federal Minister for Aviation Ghulam Sarwar Khan addressing a press conference in Rawalpindi. ONLINE PHOTO by Raja Asim

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

ثاقب نثار کے بھائی نے ذاتی کمیشن کیلئے پی کے ایل آئی بند کرانے میں مدد لی،لیگی ایم این اے محمود بشیر قائمہ کمیٹی میں پھٹ پڑے

ہفتہ اکتوبر 12 , 2019
Share on Facebook Tweet it Share on Google Email اسلام آباد(بیورورپورٹ)قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے پارلیمانی امور میں مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی چو دھری محمود بشیر ورک نے انکشاف کیا ہے کہ سابق چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس (ر) ثاقب نثار سے ان کے بھائی نے […]

چیف ایڈیٹر

سید ممتاز احمد

قارئین اور ناظرین کو لمحہ لمحہ باخبر رکھنے کے لئے” مشرق “ویب سائٹ اور” مشرق“ ٹی وی کااجراءکیاگیا ہے۔روزنامہ” مشرق“ کا قیام1962ءمیں عمل میں آیا تھا ۔یہ اخبار پاکستان کی جدید صحافت کے علمبردار آئین کی بالادستی ،جمہوری قدروں کے فروغ اور انسانی حقوق کے تحفظ کاعلم بلند کرنے کے عزم کے ساتھ دنیائے صحافت میں آیا تھا ۔ ”مشرق “نے جدید تقاضوں کے مطابق اپنے قارئین اور دنیا بھر میں پاکستانیوں کو باخبر رکھنے کے لئے ویب سائٹ اور ویب ٹی وی کا جناب سید ممتاز احمد شاہ چیف ایڈیٹر مشرق گروپ آف نیوزپیپرز کی نگرانی میں اجراءکیاہے ۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اقلیم صحافت کے درخشندہ ستارے سید ممتاز احمد کا شمار پاکستانی صحافت کے اکابرین میں ہوتا ہے۔زندگی بھر قلم وقرطاس اور پرنٹ میڈیا ہی ان کا اوڑھنا بچھونا رہا۔سید ممتاز احمد شاہ نے آج سے 50 برس قبل صحافت جیسی وادی ¿ پرخار میںقدم رکھا۔ضیائی مارشل لا کے دور میں کئی مراحل آئے جب قلم اور قرطاس سے رشتہ برقرار اور استوار رکھنا انتہائی جانگسل ہوچکا تھا لیکن وہ کٹھن اور دشوار گزار راستوں پر سے گزرتے رہے لیکن ان کے پایہ¿ استقلال میں کبھی لغزش دیکھنے سننے میں نہیں آئی۔ واضح رہے کہ سید ممتاز احمد نے ملک کے اہم ترین انگریزی اخبار ”ڈان“ ”جنگ“ ”دی نیوز“ اور روزنامہ ”مشرق“ میں اپنی گراں قدر خدمات انجام دی ہیں۔ اور ان کا مشرق کے ساتھ صحافت کا سفر جاری ہے۔