غیرملکی فنڈنگ کیس پر پارٹی رہنما پریشان نہ ہوں، وزیر اعظم

اسلام آباد: وزیر اعظم عمران خان نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کی طرف سے غیرملکی فنڈنگ کیس پر روزانہ سماعت کے فیصلے پر پارٹی رہنماؤں کو فکر مند نہ ہونے کی تلقین کردی۔

وزیر اعظم آفس میں حکومتی ترجمانوں کے ساتھ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ تحریک انصاف نے پہلے ہی پارٹی فنڈز کا آڈٹ کرالیا اور اس کا ثبوت عدالتوں اور متعلقہ فورمز میں پیش کردیا۔

بعدازاں وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان نے بتایا کہ عمران خان کا موقف تھا کہ ای سی پی کسی بھی معاملے کی سماعت کرسکتا ہے لیکن یہ حکومت کی درخواست ہے کہ الیکشن کمیشن تینوں بڑی جماعتوں پی ٹی آئی ، پاکستان مسلم لیگ نواز اور پاکستان پیپلز پارٹی کے مقدمات کی ایک ساتھ سماعت کرے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے پی پی پی اور مسلم لیگ (ن) کے پارٹی فنڈز کی تحقیقات کے لیے ای سی پی میں درخواستیں دائر کی ہیں۔

فردوس عاشق اعوان نے وزیراعظم عمران خان کا حوالہ دے کر کہا کہ ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ کمیشن ایک ہی وقت میں تینوں جماعتوں کے معاملات سنے صرف پی ٹی آئی کے نہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ غیر ملکی فنڈنگ کیس سے متعلق پارٹی ممبران کو پریشانی نہیں ہونا چاہیے کیونکہ پارٹی فنڈز کا آڈٹ ہوچکا ہے اور ان کی رپورٹس عدالتوں کے سامنے پیش کی جاچکی ہیں۔

اجلاس میں چیف جسٹس آف پاکستان آصف سعید کھوسہ کی تقریر پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا جس میں انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم خان نے خود نواز شریف کو ملک چھوڑنے کی اجازت دی ہے۔

علاوہ ازیں وزیراعظم عمران خان نے پارٹی رہنماؤں سے چیف جسٹس کے بارے میں بیان دینے سے اجتناب کرنے کی ہدایت دی۔

معاون خصوصی برائے اطلاعات نے کہا ’حکومت پارٹی کی قانونی ٹیم کے ساتھ اس معاملے پر بات اور اس کے بعد فیصلہ کرے گی کہ چیف جسٹس کے بیان کا جواب دینا ہے یا نہیں‘۔

سابق وزیراعظم نواز شریف کی لندن میں ایک فوٹیج کے پس منظرمیں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں بے نقاب ہوگئے۔

x

انہوں نے مزید کہا کہ ’لوگ لندن میں نواز شریف کی سرگرمیاں دیکھ رہے ہیں‘۔

واضح رہے نواز شریف کی لندن پہنچنے پر ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہورہی ہے جس میں بظاہر ہشاہش بشاہش نظر آرہے ہیں، جس کے بعد صارفین کڑی تنقید کررہے ہیں کہ سابق وزیراعظم کی صحت بالکل ٹھیک ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ نواز شریف کے بیٹے، جنہوں نے ان کا لندن میں استقبال کیا، اسلام آباد کی احتساب عدالت نے انھیں مجرم قرار دے دیا۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کو عدالت کے حکم پر اور میڈیکل رپورٹس کی بنیاد پر ملک چھوڑنے کی اجازت دی گئی۔

حکومت کے خلاف اپوزیشن پر تنقید کے بارے میں بات کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ اپوزیشن معیشت کے استحکام میں حکومت کی کامیابی سے خوفزدہ ہے۔

اجلاس میں قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین جاوید اقبال کی تقریر کا بھی جائزہ لیا گیا، جس میں انہوں نے اپنے 14 ماہ اقتدار میں حکومت کو جوابدہ کا عندیہ دیا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ نیب ایک آزاد ادارہ ہے اور حکومت اس کی راہ میں کوئی رکاوٹ پیدا نہیں کرے گی۔

اسلام آباد میں جمعیت علمائے اسلام (ف) کے دھرنا کے بارے میں وزیر اعظم نے کہا کہ مولانا فضل الرحمن اپنی ناکامی کو چھپانے کے لیے فلاپ احتجاج کر رہے ہیں۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ’مولانا فضل الرحمٰن کی سیاست ختم ہوچکی ہے‘۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

صارفین کے لئے بری خبر، بجلی 1 روپے 82 پیسے فی یونٹ مہنگی

جمعرات نومبر 21 , 2019
Share on Facebook Tweet it Share on Google Email اسلام آباد: صارفین کے لئے بری خبر، بجلی 1 روپے 82 پیسے فی یونٹ مہنگی کر دی گئی، نیپرا نے بجلی کی قیمت میں اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا۔ نوٹیفکشین کے مطابق بجلی کی قیمت میں اضافہ ستمبر کی فیول […]

چیف ایڈیٹر

سید ممتاز احمد

قارئین اور ناظرین کو لمحہ لمحہ باخبر رکھنے کے لئے” مشرق “ویب سائٹ اور” مشرق“ ٹی وی کااجراءکیاگیا ہے۔روزنامہ” مشرق“ کا قیام1962ءمیں عمل میں آیا تھا ۔یہ اخبار پاکستان کی جدید صحافت کے علمبردار آئین کی بالادستی ،جمہوری قدروں کے فروغ اور انسانی حقوق کے تحفظ کاعلم بلند کرنے کے عزم کے ساتھ دنیائے صحافت میں آیا تھا ۔ ”مشرق “نے جدید تقاضوں کے مطابق اپنے قارئین اور دنیا بھر میں پاکستانیوں کو باخبر رکھنے کے لئے ویب سائٹ اور ویب ٹی وی کا جناب سید ممتاز احمد شاہ چیف ایڈیٹر مشرق گروپ آف نیوزپیپرز کی نگرانی میں اجراءکیاہے ۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اقلیم صحافت کے درخشندہ ستارے سید ممتاز احمد کا شمار پاکستانی صحافت کے اکابرین میں ہوتا ہے۔زندگی بھر قلم وقرطاس اور پرنٹ میڈیا ہی ان کا اوڑھنا بچھونا رہا۔سید ممتاز احمد شاہ نے آج سے 50 برس قبل صحافت جیسی وادی ¿ پرخار میںقدم رکھا۔ضیائی مارشل لا کے دور میں کئی مراحل آئے جب قلم اور قرطاس سے رشتہ برقرار اور استوار رکھنا انتہائی جانگسل ہوچکا تھا لیکن وہ کٹھن اور دشوار گزار راستوں پر سے گزرتے رہے لیکن ان کے پایہ¿ استقلال میں کبھی لغزش دیکھنے سننے میں نہیں آئی۔ واضح رہے کہ سید ممتاز احمد نے ملک کے اہم ترین انگریزی اخبار ”ڈان“ ”جنگ“ ”دی نیوز“ اور روزنامہ ”مشرق“ میں اپنی گراں قدر خدمات انجام دی ہیں۔ اور ان کا مشرق کے ساتھ صحافت کا سفر جاری ہے۔