سلیکٹرز کو بتایا جائے عوام نے آپ کے سلیکٹڈ کو مسترد کردیا،بلاول بھٹو

مظفر گڑھ (مشرق نیوز) چیئر مین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہاہے کٹھ پتلی کو ملک پر مسلط کردیاگیا، سلیکٹڈ ہواس لیے آپ کوصرف سلیکٹرزکی فکر ہے، قوم آپ کو مزیدبرداشت نہیں کرے گی، مقدمہ سندھ کا ہوتاہے اور کیس راولپنڈی میں چلتاہے ، حکومت کا ہر ظلم برداشت کرنے کیلئے تیار ہیں لیکن یہ تو عوام پر ظلم کررہے ہیں،آپ کا حشر بھی ہر آمر اور جابر جیسا ہوگا، جو حال آج ملک کاہوچکا ہے، اس پر دل خون کے آنسو روتا ہے، ٹیکسز کی بھرمار کر کے کہتے ہیں سب پرانے پاکستان کی وجہ سے ہے،سلیکٹرز کو بتایا جائے آپ کے سلیکٹڈ کو عوام نے مسترد کردیا ،پوری اپوزیشن متفق ہے سلیکٹڈ کو باہر نکالنا ہے، اس کی آمرانہ سوچ سے جمہوریت اور آئین خطرے میں ہے،تفصیلات کے مطابق مظفر گڑھ میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا 25 جولائی کو سلیکشن ہوئی اور بدترین دھاندلی کی گئی، 2018 کے الیکشن کوکسی پارٹی نے تسلیم نہیں کیا، پولنگ ایجنٹس کو پولنگ اسٹیشن سے باہر پھینکا گیا اور عوام کے ووٹ پر ڈاکہ ڈالا گیا، کسی جماعت نے انتخابات کو تسلیم نہیں کیا،چاہتے ہیں جمہوری تسلسل برقرار رہے، عمران خان نے ایک سال میں ملکی معیشت تباہ کردی ، مقدمہ سندھ کاہوتاہے کیس راولپنڈی میں چلتاہے،آصف زرداری کونجی ڈاکٹرزسے علاج کی اجازت نہیں دی جارہی،حکومت کاہرظلم برداشت کرنے کو تیار ہیں ، پیپلزپارٹی دور میں تنخواہوں وپنشن میں اضافہ کیاگیا، 18 ویں ترمیم میں صوبوں کوخودمختاری دی گئی ، ہم دہشتگردوں سے لڑے اورجمہوریت لائے،بلاول بھٹوز رداری نے مزید کہاعمران خان کو پلیٹ میں رکھ کراقتدار دیا گیا ، صرف الزام پر سابق صدرکو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا جاتا ہے، ایک سال میں 3،3 بجٹ پیش کیے گئے،ٹیکسز کی بھر مار کر دی گئی ، آصف زرداری نے پہلے بھی 11 سال جیل میں گزارے،ہم ظلم سہنے کو تیار ہیں لیکن یہ تو عوام پر ظلم کررہے ہیں،عمران خان نے ایک سال میں ملکی معیشت تباہ کردی،آپ سلیکٹڈ ہو،اس لیے آپ کوصرف سلیکٹرزکی فکر ہے، قوم آپ کو مزیدبرداشت نہیں کرے گی،میں وعدہ کرتا ہوں عوام میں رہوں گااورعوام کیلئے لڑوں گا،بلاول بھٹو زرداری نے مزید کہاکچھ قوتیں مجھ پر دباو¿ ڈالنا چاہتی ہیں لیکن میں اصولوں پر سمجھوتہ نہیں کروں گا، ایک سال میں معیشت کا بیڑا غرق کر دیاگیا، نااہل ٹولہ ملک سنبھال سکتا ہے نہ معیشت، احتساب کے نام پر سیاسی انتقام کی حد کر دی گئی یہ کیسا احتساب ہے جو صرف اپوزیشن کا ہو رہا ہے، کیس سندھ میں ہوتا ہے لیکن چلتا پنڈی میں ہے، کچھ قوتیں مجھ پر دباو¿ ڈالنا چاہتی ہیں لیکن میں اصولوں پر سمجھوتہ نہیں کروں گا، عوام کو حکومت کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑیں گے، عوام کے حقوق کے لیے لڑتا رہوں گا،بلاول نے کہا میں نے پہلی تقریر میں عمران خان کو کہا تھا انہوں نے عوام سے کئے اپنے وعدے پورے کیے تو تعریف کریں گے لیکن وعدے پورے نہ کیے تو بھرپور مخالفت ہوگی، حکومت پچھلے10 سال کارونا رو رہی ہے اور ہر قسم کا الزام لگا رہی ہے، لیکن ان سے کوئی پوچھے 10 سال پہلے سونے کی قیمت کیا تھی اور آج کیا ہے، 10 سال قبل پٹرول، آٹا، گھی،چینی و دیگر اشیائے خورو نوش کس قیمت پر دستیاب تھے، گیس اور بجلی کی قیمتیں کیا تھیں، میں سلیکٹڈ حکومت کو بے نقاب کررہا ہوں اور اگر عوام نے کہا تو پیپلزپارٹی دھرنے کی سیاست بھی کرے گی،اگر عوام چاہیں تو ہم سلیکٹڈ کو گھر بھیج کر دکھائیں گے کارکن حکم کریں تو لانگ مارچ بھی کریں گے، کارکن حکم کرتے ہیں پیپلزپارٹی کو دھرنے کی سیاست کرنی ہے تو وہ بھی کریں گے، ’گو سلیکٹڈ‘ اب ہر طبقے کا نعرہ بن چکا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

حکومت مفاہمت نہیں،تصادم چاہتی ہے،فضل الرحمن

جمعہ نومبر 8 , 2019
Share on Facebook Tweet it Share on Google Email اسلام آباد(بیورورپورٹ)جے یوآئی کے امیر فضل الرحمن نے کہاہے حکومتی وزراءکا لب ولہجہ مفاہمت نہیں تصادم کی طرف جاتا ہے، 12ربیع الاول کو حکومت کو گھر بھیجنے کاپلان دینگے،دھاندلی سے آنےوالوں کو حکومت نہیں کرنے دیں گے،دھرنے کے شرکاءسے خطاب کرتے […]

چیف ایڈیٹر

سید ممتاز احمد

قارئین اور ناظرین کو لمحہ لمحہ باخبر رکھنے کے لئے” مشرق “ویب سائٹ اور” مشرق“ ٹی وی کااجراءکیاگیا ہے۔روزنامہ” مشرق“ کا قیام1962ءمیں عمل میں آیا تھا ۔یہ اخبار پاکستان کی جدید صحافت کے علمبردار آئین کی بالادستی ،جمہوری قدروں کے فروغ اور انسانی حقوق کے تحفظ کاعلم بلند کرنے کے عزم کے ساتھ دنیائے صحافت میں آیا تھا ۔ ”مشرق “نے جدید تقاضوں کے مطابق اپنے قارئین اور دنیا بھر میں پاکستانیوں کو باخبر رکھنے کے لئے ویب سائٹ اور ویب ٹی وی کا جناب سید ممتاز احمد شاہ چیف ایڈیٹر مشرق گروپ آف نیوزپیپرز کی نگرانی میں اجراءکیاہے ۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اقلیم صحافت کے درخشندہ ستارے سید ممتاز احمد کا شمار پاکستانی صحافت کے اکابرین میں ہوتا ہے۔زندگی بھر قلم وقرطاس اور پرنٹ میڈیا ہی ان کا اوڑھنا بچھونا رہا۔سید ممتاز احمد شاہ نے آج سے 50 برس قبل صحافت جیسی وادی ¿ پرخار میںقدم رکھا۔ضیائی مارشل لا کے دور میں کئی مراحل آئے جب قلم اور قرطاس سے رشتہ برقرار اور استوار رکھنا انتہائی جانگسل ہوچکا تھا لیکن وہ کٹھن اور دشوار گزار راستوں پر سے گزرتے رہے لیکن ان کے پایہ¿ استقلال میں کبھی لغزش دیکھنے سننے میں نہیں آئی۔ واضح رہے کہ سید ممتاز احمد نے ملک کے اہم ترین انگریزی اخبار ”ڈان“ ”جنگ“ ”دی نیوز“ اور روزنامہ ”مشرق“ میں اپنی گراں قدر خدمات انجام دی ہیں۔ اور ان کا مشرق کے ساتھ صحافت کا سفر جاری ہے۔