بحران سے نکل کر مستحکم دور میں داخل ہوگئے، مشیر خزانہ

مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے دعویٰ کیا ہے کہ ملک کی معاشی و اقتصادی صورتحال بحران سے نکل کر مستحکم دور میں داخل ہوچکی ہے۔

مشیر خزانہ نے پریس کانفرنس کے دوروان بتایا کہ اس ضمن میں حکومتی اخراجات کم کیے گئے اور دفاعی بجٹ کو گزشتہ سطح پر برقرار رکھا گیا۔

انہوں نے بتایا کہ جس وقت موجودہ حکومت وجود میں آئی تو معاشی اشاریے پریشان کن تھے جس کو مد نظر رکھتے ہوئے فوری طور پر معاشی اصلاحات کے ذریعے صورتحال کو بہتر کیا گیا۔

’580 ارب روپے کے ٹیکسز وصولی‘

عبدالحفیظ شیخ کا کہنا تھا کہ ٹیکس وصولی میں گزشتہ سال کی نسبت اضافہ ہوا اور فائلرز کی تعداد بڑھائی گئی۔

انہوں نے کہا کہ درآمدات میں کمی کرکے برآمدات میں اضافہ کیا گیا اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں 70 فیصد تک کمی لائی گئی۔

ان کا کہنا تھا کہ رواں سال جولائی اور اگست میں 580 ارب روپے کے ٹیکسز جمع کیے گئے جبکہ 23 اگست سے ٹیکس ریفنڈ کا سلسلہ شروع کردیا گیا۔

مشیر خزانہ نے اعلان کیا کہ نجکاریوں کا عمل تیزی کے ساتھ مکمل کیا جائے گا اور مسائل کا شکار بجلی فراہم کرنے والی کمپنیوں کی بھی نجکاری کی جائے گی۔

عبدالحفیظ شیخ نے بتایا کہ حکومت نے اخراجات پر کنٹرول کرنے کے لیے اسٹیٹ بینک سے ادھار نہیں لیا۔

6 لاکھ اضافی ٹیکس فائلرز کا اضافہ

انہوں نے بتایا کہ ملک میں امیر طبقہ ٹیکس کی ادائیگی سے گریز کرتا ہے، گزشتہ برس تک ٹیکس فائلرز کی تعداد 19 لاکھ تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ ’ہم نے اصافی 6 لاکھ افراد کو ٹیکس نیٹ میں شامل کیا ہے‘۔

مشیر خزانہ نے کہا کہ ’2015 سے لیکر اب تک 22 ارب روپے پر مشتمل سیلز ٹیکس ریفنڈز کے آر پی او تشکیل دے دیے اور اب حکومت کے اوپر کوئی سیلز ٹیکس کی آرپی او نہیں ہے‘۔

عبدالحفیظ شیخ نے کہا کہ ’حکومت نے اپنا ایک وعدہ پورا کیا‘۔

ایکسپورٹرز کے ریفنڈز کی ادائیگی

انہوں نے کہا کہ ’ہم نے عوام سے کیے گیا ایک اور وعدہ پورا کردیا جس کے تحت ایکسپورٹرز کو ہر ماہ کی 16 تاریخ کو ریفنڈز مل جائے گا‘۔

انہوں نے بتایا کہ ایکسپورٹرز چاہتے ہیں کہ ان کا ریفنڈز جلدی دیا جائے اس مقصد کے لیے 23 اگست سے نیا نظام شروع کیا جس کے تحت فوری اور مکمل ریفنڈز ہوجائےگا۔

ان کا کہنا تھا کہ مذکورہ نظام کے تحت جیسے ہی ایکسپورٹرز اپنا ڈیٹا ڈالے گا ہر مہینے کی 16 تاریخ کو ریفنڈ بن جائےگا۔

خسارے سے دوچار مالیاتی اداروں کی نجکاری کا فیصلہ

مشیر خزانہ نے کہا کہ ’جو سرکاری مالیاتی ادارے خسارے سے دور چار ہیں انہیں پرائیوٹ سیکٹر کے حوالے کیا جائے گا‘۔

انہوں نے کہا کہ ’حکومت نے اس ضمن میں دو اہم فیصلے کیے ہیں، نجکاری کے عمل میں تیز کرنے کے لیے 10 نئی کمپنیاں آئیں‘۔

ان کا کہنا تھا کہ ’اس عمل کو فاسٹ ٹریکٹ پر کیا جائے گا تاکہ پیدوارای لاگت بڑھے‘۔

عبدالحفیظ شیخ نے بتایا کہ ملک کے وہ 20 مالیاتی ادارے جن میں بہتری کی گنجائش ہے، اس مقصد کے لیے سرمایہ پاکستان نامی ادارے کو فعال کردیا گیا ہے اور جو اداروں کی از سر نو تنظیم سازی کریں گی۔

مشیر خزانہ نے بتایا کہ ڈسٹری بیوشن کمپنیوں سمیت بڑے اداروں نیشنل بینک آف پاکستان اور اسٹیٹ لائف بھی نجکاری کے دائرے میں آسکتے ہیں.

انہوں نے بتایا کہ بجلی کی چوری کی مد میں ماہانہ 38 ارب گردشی قرضوں کا اضافہ ہورہا تھا، اب 100 ارب روپے کی چوری پر قابو پایا گیا کہ اور گزشتہ جولائی میں 10 ارب روہے سے کم چوری کی گئی۔

نان ٹیکس ریونیو کے ذرائع

انہوں نے نان ٹیکس ریونیو کے بارے میں بتایا کہ حکومت نے ٹیکس کے بغیر آمدنی کے ذرائع بڑھانے پر غور کیا ہے اور اس ضمن میں سیلولر کمپنیوں سے 140 ارب روپے حاصل کیے جا چکے ہیں تاہم مزید 70 ارب روپے ملنا متوقعہ ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ آر ایل این جی کی پلانٹ کی نجکاری دسمبر میں ہوجائے گی اور اس مد میں 300 ارب روپے کی آمدنی متوقعہ ہے۔ مشیر خزانہ نے بتایا کہ ’اگر ایکسچینج ریٹ میں بہتر رہے تو اسٹیٹ بینک کی آمدنی کو 400 ارب روپے دیکھ رہے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

بااثر ترین مسلم شخصیات کی فہرست میں عمران خان، ملالہ اور مولانا طارق جمیل بھی شامل

اتوار ستمبر 15 , 2019
Share on Facebook Tweet it Share on Google Email دنیا کی 500 بااثر ترین مسلمان شخصیات کی فہرست میں وزیراعظم پاکستان عمران خان بھی شامل ہو گئے ہیں۔ اردن کے رائل اسلامک اسٹریٹجک سینٹر کی جانب سے مسلم دنیا کے 500 بااثر ترین شخصیات کی فہرست جاری کی گئی ہے […]
بااثر ترین مسلم شخصیات کی فہرست میں عمران خان، ملالہ اور مولانا طارق جمیل بھی شامل

چیف ایڈیٹر

سید ممتاز احمد

قارئین اور ناظرین کو لمحہ لمحہ باخبر رکھنے کے لئے” مشرق “ویب سائٹ اور” مشرق“ ٹی وی کااجراءکیاگیا ہے۔روزنامہ” مشرق“ کا قیام1962ءمیں عمل میں آیا تھا ۔یہ اخبار پاکستان کی جدید صحافت کے علمبردار آئین کی بالادستی ،جمہوری قدروں کے فروغ اور انسانی حقوق کے تحفظ کاعلم بلند کرنے کے عزم کے ساتھ دنیائے صحافت میں آیا تھا ۔ ”مشرق “نے جدید تقاضوں کے مطابق اپنے قارئین اور دنیا بھر میں پاکستانیوں کو باخبر رکھنے کے لئے ویب سائٹ اور ویب ٹی وی کا جناب سید ممتاز احمد شاہ چیف ایڈیٹر مشرق گروپ آف نیوزپیپرز کی نگرانی میں اجراءکیاہے ۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اقلیم صحافت کے درخشندہ ستارے سید ممتاز احمد کا شمار پاکستانی صحافت کے اکابرین میں ہوتا ہے۔زندگی بھر قلم وقرطاس اور پرنٹ میڈیا ہی ان کا اوڑھنا بچھونا رہا۔سید ممتاز احمد شاہ نے آج سے 50 برس قبل صحافت جیسی وادی ¿ پرخار میںقدم رکھا۔ضیائی مارشل لا کے دور میں کئی مراحل آئے جب قلم اور قرطاس سے رشتہ برقرار اور استوار رکھنا انتہائی جانگسل ہوچکا تھا لیکن وہ کٹھن اور دشوار گزار راستوں پر سے گزرتے رہے لیکن ان کے پایہ¿ استقلال میں کبھی لغزش دیکھنے سننے میں نہیں آئی۔ واضح رہے کہ سید ممتاز احمد نے ملک کے اہم ترین انگریزی اخبار ”ڈان“ ”جنگ“ ”دی نیوز“ اور روزنامہ ”مشرق“ میں اپنی گراں قدر خدمات انجام دی ہیں۔ اور ان کا مشرق کے ساتھ صحافت کا سفر جاری ہے۔