امریکا نے ایف-35 طیارے نہیں دیے تو دوسرے ملک جائیں گے، ترک صدر

ترک صدر رجب طیب اردوان نے امریکا کے ترکی کو ایف-35 طیاروں کے پروگرام سے باہر کرنے کے فیصلے پر رد عمل دیتے ہوئے کہا کہ اگر ایسا کیا گیا کہیں اور سے حاصل کرنے کی کوشش کریں گے۔

واضح رہے کہ ترکی نے حال ہی میں روس سے ایس-400 میزائل نظام کا معاہدہ کیا تھا اور اس کی ابتدائی کھیپ بھی پہنچ گئی ہے جس پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ترکی کو اس معاہدے سے باز رہنے کا مطالبہ کیا تھا۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے ترکی کے فیصلے کے بعد اعلان کیا تھا کہ نیٹو اتحادی ترکی کو ایف-35 طیاروں کے پروگرام سے باہر کردیا جائے گا اور پابندیاں بھی عائد کردی جائیں گی۔

انقرہ میں جسٹس اینڈ ڈیولپمنٹ پارٹی (اے کے پی) کے ایک جلسے میں خطاب کرتے ہوئے طیب اردوان نے کہا کہ ‘اگلے موسم بہار میں ہم ایس-400 نظام استعمال کرنے کے قابل ہوجائیں گے’۔

ترکی نے اس سے قبل بھی امریکی مطالبات اور دھمکیوں کو مسترد کردیا تھا۔

اردوان نے اپنے خطاب میں امریکا سے کشیدہ تعلقات پر کہا کہ امید ہے کہ امریکی عہدیدار پابندیوں کے معاملے پر ‘بہتر’ فیصلہ کریں گے اور ان کا کہنا تھا کہ اس صورت میں ترکی کو امریکا سے جدید بوئنگ طیارے خریدنے کے معاملے پر نظر ثانی کرسکتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ گزشہ ماہ کے آخر میں جاپان میں منعقدہ جی-20 سربراہی اجلاس میں اس معاملے کو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سامنے اٹھایا تھا۔

ٹرمپ سے ملاقات کے حوالے سے ترک صدر کا کہنا تھا کہ ‘کیا آپ ہمیں ایف-35 طیارے نہیں دیں گے، پھر ٹھیک ہے لیکن ہم ایک مرتبہ پھر اس معاملے پر اقدامات کریں گے اور ہم کہیں اور جائیں گے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘اگر ہمیں ایف-35 طیارے نہیں مل رہے ہیں تو ہم 100 جدید بوئنگ طیارے خرید رہے ہیں جس کے معاہدے پر دستخط ہوچکے ہیں اور ایک بوئنگ پہنچ بھی چکا ہے اور اس کی ادائیگی بھی کررہے ہیں اور ہم کسٹمرز ہیں’۔

بوئنگ طیاروں کےمعاہدے پر بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ‘اگر اس طرح کی چیزیں جاری رہیں تو پھر ہم اس معاملے پر نظر ثانی کریں گے’۔

خیال رہے کہ رواں ماہ ہی روسی ساختہ دفاعی نظام ایس-400 کی پہلی کھیپ ترکی کو موصول ہوگئی تھی جبکہ اس سے قبل ہی امریکی حکام نے خبردار کیا تھا کہ روس سے معاہدے کی صورت میں ترکی کو پابندیوں کا بھی سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔

امریکا کے جواب میں ترک صدر رجب طیب اردوان نے کہا تھا کہ امریکا کی دھمکیوں کے باوجود روس کے ساتھ ایس-400 میزائل کے معاہدے سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔

امریکا نے اپریل 2019 میں ترکی کی جانب سے روس سے دفاعی میزائل نظام خریدنے کے فیصلے پر ڈٹ جانے کے بعد پہلا سخت اقدام اٹھاتے ہوئے ترکی کو ریڈار میں دکھائی نہ دینے والے ایف-35 جنگی طیاروں سے منسلک آلات کی فراہمی روک دی تھی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

اسرائیل سے تمام معاہدوں پر عمل درآمد ختم کردیں گے، فلسطینی صدر

ہفتہ جولائی 27 , 2019
فلسطینی صدر محمود عباس کا کہنا ہے کہ انہوں نے اسرائیل کے ساتھ بڑھتی ہوئی کشیدگی کے باعث فیصلہ کیا ہے کہ وہ تمام معاہدوں پر عمل در آمد روک دیں۔ مغربی کنارے کے شہر رام اللہ میں تقریر کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا ‘اعلیٰ قیادت نے فیصلہ کیا […]

چیف ایڈیٹر

سید ممتاز احمد

مشرق اخبار لاہور کوئٹہ پاکستان کے سائیڈ ممتاز احمد شیف ڈائریکٹر. مشرقی اخبار قومی اور بین الاقوامی سطح پر پاکستانی اپ ڈیٹ میں اہم حصہ کام کر رہا ہے. غریب اور ناقدین کے قوانین اور قوانین کی آواز. مشرقی اخبار اس کے روشن مستقبل کی تلاش میں ہے

فوری روابط