استعفے کی شرط پر مذاکرات نہیں ہوں گے،عمران خان

اسلام آباد(شاکر رحمان سے)وزیراعظم عمران خان نے کہاہے اگر استعفیٰ ہی شرط ہے تو مذاکرات نہیں ہونے چاہئیں،میں کسی بھی صورت میں اپنا استعفیٰ نہیں دوں گا،تفصیلات کے مطابق وزیردفاع پرویز خٹک کی سربراہی میں حکومتی مذاکراتی ٹیم اور سپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویز الٰہی نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کی اور اپوزیشن کےساتھ ہونےوالی بات چیت سے آگاہ کیا،چودھری پرویز الٰہی نے وزیراعظم عمران خان کوفضل الرحمن سے ہونےوالی5ملاقاتوں کی تفصیلات پر بریفنگ دی اورمذاکرات کے تعطل کی وجوہات سے آگاہ کیاعلاوہ ازیںوزیراعظم عمران خان سے حکومتی مذاکراتی کمیٹی نے ملاقات کی جس میں وفاقی وزیرداخلہ اعجاز شاہ اور بابر اعوان بھی شریک ہوئے، وزیر داخلہ نے وزیراعظم کو حکومتی حکمت عملی اور انتظامی اقدامات سے آگاہ کیا،ملاقات کے دوران حکومتی مذاکراتی کمیٹی نے وزیراعظم کو کہااحتجاج جمہوری حق ہے حکومت کو کوئی خطرہ نہیں، خطرہ ہوتا تو دھرنے والوں کو اسلام آباد نہ آنے دیا جاتا،ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے مذاکراتی کمیٹی کو اپوزیشن سے مذاکرات جاری رکھنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا استعفے کا مطالبہ غیر آئینی ہے، سنجیدہ مذاکرات کیے جائیں، بار بار استعفے کی بات ہو رہی ہے اگر استعفیٰ ہی شرط ہے تو مذاکرات نہیں ہونے چاہئیں،وزیراعظم عمران خان نے کہا کھلے دل سے احتجاج اور مارچ کی اجازت دی لیکن اگر شرط صرف استعفے کی ہے تو مذاکرات کا کیا فائدہ ہے،وزیراعظم نے کہا معاملے کو سیاسی طور پر حل کرنا چاہتے ہیں ،و زیر اعظم عمران خان نے واضح کیا استعفیٰ کسی صورت نہیں دونگا ،جوڈیشل کمیشن کے ذریعے دھاندلی کی تحقیقات کرانے کو تیار ہوں، منظم دھاندلی ثابت ہو جائے تو خود عہدہ چھوڑ دوں گا،ہمارے دھرنے اور موجودہ دھرنے میں فرق ہے، بغیر دھاندلی کے ثبوت چند ہزار لوگ لا کر استعفے کی روایت نہیں ڈالنی چاہیے، ہم نے دھاندلی پر شواہد دئیے، بات نہ سنی جانے پر دھرنا دیا،ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے کمیٹی کو اعجاز شاہ اور بابر اعوان کےساتھ مزید مشاورت کی ہدایت کردی،دریں اثناءوزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت حکومتی ترجمانوں کا اجلاس ہوا جس میں ملک کی سیاسی و معاشی صورتحال کا جائزہ لیا گیا،وزیراعظم نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہاآزادی مارچ سے متعلق معاملات مذاکراتی کمیٹی دیکھ رہی ہے، مذاکرات کے دوران سخت بیانات دینے سے گریز کریں، انتخابی دھاندلی پر عدالتی کمیشن بنا لیں یا پارلیمانی ہم تیار ہیں، ہم نے 4 حلقے کھولنے کا کہا تھا ہم سارے حلقے کھولنے کو تیار ہیں، مولانا نے کہاانہیں لاشیں چاہئیں، جمہوری لوگ ہیں لاشیں نہیں دیں گے، افراتفری پھیلانے کی اجازت نہیں دی جائےگی،وزیراعظم نے کہاملکی معیشت میں استحکام آچکا اب اپنے منشور پر مکمل عملدرآمد کی جانب بڑھ رہے ہیں،کمیٹی ارکان مذاکرات کے دوران سخت بیانات دینے سے گریز کریں،،علاوہ ازیںوزیراعظم کی زیر صدارت خصوصی اجلاس ہوا جس میں مشیر تجارت عبدالرزاق داو¿د، معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان، یوسف بیگ مرزا، متعلقہ محکموں کے سینئر افسران نے شرکت کی،اجلاس میں سرحدی علاقوں میں ٹریڈ مارکیٹس کے قیام سے متعلق اقدامات کا جائزہ لیا گیا، وزیراعظم کو مغربی سرحدوں پر سمگلنگ کی روک تھام کےلئے اقدامات سے آگاہ کیا گیا اور سرحدی علاقوں کے عوام کو روزگار کے متبادل ذرائع کا لائحہ عمل بھی پیش کیا گیا،اس موقع پر وزیراعظم عمران خان نے کہاسمگلنگ کا ناسور ملکی معیشت کےلئے زہر قاتل ہے، سمگلنگ ملکی وسائل آمدنی کو متاثر کرتی ہے، صنعت کی تباہی کا باعث ہے، سرحدی علاقوں کے عوام خصوصاً نوجوانوں کی معاشی مشکلات کا احساس ہے،عوام کو روزگار کی فراہمی کےلئے ٹریڈ مارکیٹس کے قیام کی تجویز قابل تحسین ہے، کے پی، بلوچستان کے سرحدی علاقوں میں ٹریڈ مارکیٹس کے قیام کا جلد آغاز کیا جائے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

سلیکٹرز کو بتایا جائے عوام نے آپ کے سلیکٹڈ کو مسترد کردیا،بلاول بھٹو

جمعہ نومبر 8 , 2019
Share on Facebook Tweet it Share on Google Email مظفر گڑھ (مشرق نیوز) چیئر مین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہاہے کٹھ پتلی کو ملک پر مسلط کردیاگیا، سلیکٹڈ ہواس لیے آپ کوصرف سلیکٹرزکی فکر ہے، قوم آپ کو مزیدبرداشت نہیں کرے گی، مقدمہ سندھ کا ہوتاہے اور کیس […]

چیف ایڈیٹر

سید ممتاز احمد

قارئین اور ناظرین کو لمحہ لمحہ باخبر رکھنے کے لئے” مشرق “ویب سائٹ اور” مشرق“ ٹی وی کااجراءکیاگیا ہے۔روزنامہ” مشرق“ کا قیام1962ءمیں عمل میں آیا تھا ۔یہ اخبار پاکستان کی جدید صحافت کے علمبردار آئین کی بالادستی ،جمہوری قدروں کے فروغ اور انسانی حقوق کے تحفظ کاعلم بلند کرنے کے عزم کے ساتھ دنیائے صحافت میں آیا تھا ۔ ”مشرق “نے جدید تقاضوں کے مطابق اپنے قارئین اور دنیا بھر میں پاکستانیوں کو باخبر رکھنے کے لئے ویب سائٹ اور ویب ٹی وی کا جناب سید ممتاز احمد شاہ چیف ایڈیٹر مشرق گروپ آف نیوزپیپرز کی نگرانی میں اجراءکیاہے ۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اقلیم صحافت کے درخشندہ ستارے سید ممتاز احمد کا شمار پاکستانی صحافت کے اکابرین میں ہوتا ہے۔زندگی بھر قلم وقرطاس اور پرنٹ میڈیا ہی ان کا اوڑھنا بچھونا رہا۔سید ممتاز احمد شاہ نے آج سے 50 برس قبل صحافت جیسی وادی ¿ پرخار میںقدم رکھا۔ضیائی مارشل لا کے دور میں کئی مراحل آئے جب قلم اور قرطاس سے رشتہ برقرار اور استوار رکھنا انتہائی جانگسل ہوچکا تھا لیکن وہ کٹھن اور دشوار گزار راستوں پر سے گزرتے رہے لیکن ان کے پایہ¿ استقلال میں کبھی لغزش دیکھنے سننے میں نہیں آئی۔ واضح رہے کہ سید ممتاز احمد نے ملک کے اہم ترین انگریزی اخبار ”ڈان“ ”جنگ“ ”دی نیوز“ اور روزنامہ ”مشرق“ میں اپنی گراں قدر خدمات انجام دی ہیں۔ اور ان کا مشرق کے ساتھ صحافت کا سفر جاری ہے۔